امریکا کو سعودی عرب کے ساتھ مضبوط شراکت داری کی ضرورت ہے: نامزد سفیر جان ابی زید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سعودی عرب میں نامزد سفیر ریٹائرڈ آرمی جنرل جان پی ابی زید نے کہا ہے کہ امریکا کو مشرقِ اوسط میں استحکام کے لیے سعودی عرب کے ساتھ درپیش چیلنجز کے باوجود ایک مضبوط اور پختہ شراکت داری کی ضرورت ہے۔

انھوں نے یہ بات واشنگٹن میں امریکی سینیٹ کی خارجہ تعلقات کمیٹی کے روبرو اپنے تقرر کی تصدیق کے لیے سماعت کے موقع پر بیان دیتے ہوئے کہی ہے۔انھوں نے کہا کہ’’ سعودی عرب کے ساتھ شراکت داری اور اس کے تعاون کے بغیر سنی انتہا پسندی کو روک لگانے یا ایران پر چیک برقرار رکھنے کے لیے امریکا کی کوششوں کی کامیابی کا تصور بھی محال ہے‘‘۔

جان ابی زید نے کہا کہ جمال خاشقجی کے قتل کے پُراسرار واقعے ، لوگوں سے مبینّہ ناروا سلوک اور یمن جنگ میں سعودی عرب کی شرکت کے باوجود یہ امریکا کے مفاد میں ہے کہ وہ مملکت کے ساتھ شراکت داری کو پختہ بنائے۔

انھوں نے واضح کیا کہ امریکا کی سعودی عرب سےتعلق داری ایک قوم کے ساتھ اور ایک حکومت کے ساتھ ہے۔انھوں نے کہا کہ وہ طویل المیعاد مسائل کے حل کے لیے کام کریں گے۔

واضح رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اقتدار سنبھالنے کے بعد اپنا پہلا غیر ملکی دورہ سعودی عرب ہی کا کیا تھا لیکن تب سے الریاض میں کوئی امریکی سفیر متعیّن نہیں ہے اور انھوں نے اب ریٹائرڈ آرمی جنرل جان پی ابی زید کو امریکا کا نیا سفیر مقرر کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں