یمن: حجہ صوبے میں حوثیوں کا العبیسہ پر حملہ، کئی دیہات مکمل طور پر تباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن میں حوثی ملیشیا نے حجہ صوبے کے ضلع کشر کے شمال مشرق میں العبیسہ کے علاقے اور متعدد نواحی دیہات پر حملہ کر دیا۔ یہ پیش رفت کئی روز سے جاری ٹینکوں کی گولہ باری اور راکٹ باری کے بعد سامنے آئی ہے۔

ذرائع نے جمعرات کے روز ’’العربیہ‘‘ نیوز چینل کے ذرائع کو بتایا کہ حوثیوں کی وحشیانہ کارروائی کے نتیجے میں کئی دیہات جل کر خاکستر اور تباہ ہو گئے۔ علاوہ ازیں 2000 سے زیادہ یمنی خاندان بے گھر ہو گئے۔

قبائلی ذرائع نے باور کرایا کہ حوثیوں کے حملے کے دوران ایران نواز ملیشیا نے قبائلی مزاحمت کاروں اور دیہات پر شدید فائرنگ کی اور بیلسٹک میزائل بھی داغے۔ واضح رہے کہ حوثی ملیشیا نے چار سمتوں سے العبیسہ کے علاقے کا سخت محاصرہ کر رکھا ہے۔

حجور قبائل کے عمائدین نے ایک بیان میں اعلان کیا ہے کہ "حوثی ملیشیا اس وقت کشر ضلع کی مقامی آبادی کے خلاف نسل کشی کے درپے ہے۔ ملیشیا نے دیہات پر دھاوا بول کر لوگوں سمیت گھروں کو دھماکوں سے اڑا دیا"۔

ابتدائی اندازے کے مطابق اب تک خواتین اور بچوں سمیت 150 سے زیادہ شہری جاں بحق ہو چکے ہیں جب کہ سیکڑوں زخمی بھی ہوئے ہیں۔

ادھر یمنی فوج کی ویب سائٹ کے مطابق حوثی ملیشیا کی جانب سے حجہ صوبے کے شمالی ضلع حیران میں راکٹ باری کے نتیجے میں ایک شخص جاں بحق اور سات زخمی ہو گئے۔

مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ حوثی ملیشیا نے حیران ضلع کے ایک گاؤں الزین میں کیٹوشیا راکٹوں کے ذریعے شہریوں کے گھروں کو نشانہ بنایا۔ ذرائع کے مطابق اس بم باری کے نتیجے میں ایک شہری جاں بحق اور اس کی 6 سالہ بیٹی زخمی ہو گئی۔ علاوہ ازیں ایک دوسرے خاندان کے چھ افراد بھی زخمی ہو گئے جن میں ایک خاتون شامل ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ بم باری سے مذکورہ گاؤں میں شہریوں کے گھروں کو شدید نقصان پہنچا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں