یورپی عدالت نے حماس کے اثاثے منجمد کرنے کے فیصلے کی توثیق کر دی

حماس کی طرف سے دائر کردہ اپیل مسترد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

یوریی یونین کی ایک عدالت نے فلسطینی تنظیم 'حماس' کے اثاثے منجمد کرنے کے فیصلے کی توثیق کی ہے اور اس حوالے سے حماس کی طرف سے دائر کردہ درخواست مسترد کر دی ہے۔ یورپی یونین حماس کو اسرائیل کے خلاف مسلح کارروائیوں میں ملوث ہونے پر دہشت گرد تنظیم قرار دے چکی ہے۔

یورپی یونین نے گیارہ ستمبر 2001ء کو امریکا میں ہونے والے حملوں کے بعد حماس کی دہشت گردانہ سرگرمیوں‌ پر تنظیم کو بلیک لسٹ کر دیا تھا۔ حماس اس کے بعد یورپی عدالتوں میں پابندی اٹھانے لیے قانونی جنگ لڑتی رہی ہے، مگر یورپ کی کسی عدالت نے حماس کے اثاثے بحال کرنے کی حمایت نہیں کی ہے۔

لکسمبرگ میں قائم یورپی عدالت نے بدھ کےروز حماس کی طرف سے دائر کردہ دخواست مسترد کرتے ہوئے حماس کےاثاثے بدستور منجمد رکھنے کے سابقہ عدالتی فیصلے کی توثیق کی۔

اس سے قبل سنہ 2015ء کو یورپ کی ایک پبلک کورٹ نے حماس کو بلیک لسٹ میں رکھنے کے فیصلے کی حمایت کی تھی۔ عدالت میں برطانیہ کی طرف سے دی گئی درخواست میں کہا گیاتھا کہ سنہ 2011ء اور 2014ء کے دوران بھی حماس دہشت گردانہ سرگرمیوں میں ملوث رہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں