نیوزی لینڈ، مساجد میں دہشت گردی کے شہداء کی تعداد 50 ہوگئی، 50 زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

نیوزی لینڈ کے پولیس کمشنر مائیک بُش نے کہا ہے کہ جُمعہ کے روز کرائیسٹ چرچ شہر میں دو مساجد میں نمازیوں کے وحشیانہ قتل عام کے نتیجے میں شہید ہونے والے نمازیوں کی تعداد 50 ہوگئی ہے جب کہ 50 افراد زخمی ہیں۔ ان میں سے دو کی حالت بدستور خطرے میں بتائی جاتی ہے۔ پولیس سربراہ کا کہنا تھا کہ مساجد میں دہشت گردی کے الزام میں صرف ایک شخص کو حراست میں لیا گیا ہے جس کے خلاف جلد ہی فرد جرم عاید کی جائے گی۔

نیوزی لینڈ کی پولیس کا کہنا ہے کہ مساجد میں حملوں سے متعلق مزید اہم معلومات حاصل ہوئی ہیں۔ ان کے بارے میں وزیراعظم جلد ہی میڈیا کے ذریعے تفصیلات بیان کریں گی۔

پولیس نے تمام شہداء کی شناخت نہیں کی۔ حکام کا کہنا ہے کہ امن وامان کے حوالے سے حالات بہتر ہونے کے بعد ہی مساجد کو کھولنے کی اجازت دی جائے گی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ جو افراد مساجد سے باہر مارے گئے۔ شاید وہ مسجد کے اندر جانے کی کوشش کررہے تھے کہ دہشت گرد کی فائرنگ کا نشانہ بن گئے۔ پولیس پیشہ وارانہ انداز میں اس واقعے کی تحقیقات کررہی ہے۔

نیوزی لینڈ کی پولیس نے دہشت گردانہ کارروائی روکنے کے لیے ملزم کو پرتشدد طریقے سے گرفتار کیا تاکہ وہ دوبارہ کارروائی نہ کرسکے۔

پولیس کے مطابق مجرم نے 2017ء میں اسلحہ کا لائسنس حاصل کیا جس کے بعد اس نے اپنی مرضی سے اسلحہ میں تبدیلی کی۔ نمازیوں پرحملے کے شبے میں گرفتار خاتون کو رہا کردیا گیا ہے جب کہ ایک تیسرے شخص کو گرفتار کیا گیا مگر اس پر بھی دہشت گردانہ کاروائی میں ملوث ہونے کا شبہ ثابت نہیں ہوسکا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں