.

عرب سربراہ کانفرنس آج اتوار کو تیونس میں شروع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تیونس کی میزبانی میں 30 ویں عرب سربراہ اجلاس میں مختلف عرب ممالک کے وفود شرکت کے لیے پہنچ گئے ہیں جس کے بعد اب سے کچھ دیر بعد عرب لیگ کا اجلاس شروع ہوجائے گا۔

"العربیہ" چینل کے مطابق عرب لیگ کے سربراہ اجلاس کے ایجنڈے میں مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت بنائے جانے، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سےمقبوضہ وادی گولان کو اسرائیل کا حصہ تسلیم کرنے کا اعلان، خطے میں ایرانی مداخلت، شام، یمن اور لیبیا میں سیاسی بحران کے حل جیسے اہم موضوعات شامل ہوں گے۔

گذشتہ روز بھی تیونس میں جمع ہونے والی عرب قیادت نےمذاکرات کیے۔ مختلف سطح کے اجلاسوں میں بھی القدس، وادی گولان، شام، یمن، لیبیا اورخطے میں ایرانی مداخلت کی روک تھام پر بات چیت کی گئی۔

عرب سربراہ کانفرنس سے افتتاحی خطاب سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کریں گے اور اپنے خطاب میں عرب سربراہ کانفرنس کی میزبانی تیونس کو دیں‌ گے۔

کانفرنس کےترجمان محمود الخمیری کا کہنا ہے کہ عرب سربراہ کانفرنس میں شام شریک نہیں۔ اس کے علاوہ باقی بیشترعرب سربراہ موجود ہوں گے۔ 12 دوسرے ممالک کے سربراہان اور اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بھی اجلاس میں مدعو کے گئے ہیں۔

عرب سربراہ اجلاس کےایجنڈے میں مقبوضہ وادی گولان کے بارے میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے متنازع فیصلے، اسرائیل میں سفارت خانوں کی القدس منتقلی کی روک تھام کے اقدامات، خطے میں ایران کی بڑھتی مداخلت کی روک تھا، سعودی عرب پر حوثی باغیوں کے میزائل حملوں کی مذمت، یمن کی وحدت، خود مختاری اور آزادی،لیبیا کےبحران کےسیاسی حل اور شام میں دستور سازی اور بحران کے سیاسی حل پرزور دیا جائے گا۔