سوڈان: فوجی ہیڈ کوارٹر کے باہر مظاہرین پر آنسوگیس کی شیلنگ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سوڈان میں مسلح افواج کے ہیڈ کوارٹر کے باہر صدر عمر البشیر کے استعفے کے حق میں احتجاج کرنے والے شہریوں پر پولیس نے طاقت کا استعمال کیا جس کے نتیجے میں متعدد مظاہرین زخمی ہوگئے۔

العربیہ کے مطابق ہفتے کے روز دارالحکومت خرطوم میں شہریوں کی بڑی تعداد نے دارالحکومت میں قائم مسلح افواج کے ہیڈکوارٹر کے باہر صدر البشیر کے خلاف احتجاج کیا۔ عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے ان پر آنسو گیس کی شیلنگ کی۔

بعض مظاہرین نے پولیس اہلکاروں پر پتھرائو کیا۔ مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی تھی جس نے آنسو گیس شیلنگ سے مظاہرین کو منتشر کرنے کی کوشش کی۔

ہفتے کے روز دارالحکومت خرطوم میں الگ الگ شہریوں نے مختلف مقامات پر ریلیاں نکالیں۔ بعد ازاں تمام مظاہرین فوج کے ہیڈ کوارٹر کے باہر جمع ہوگئے اور صدر عمر البشیر کی برطرفی کے لیے نعرے لگانے لگے۔'

اس موقع پر پولیس نے آرمی ہیڈ کواٹر کو ملانے والی مرکزی شاہراہ سیل کر دی۔ فوج کی طرف سے پولیس سے کہا گیا کہ وہ مظاہرین پر آنسو گیس کی شیلنگ نہ کرے جب کہ مظاہرین سے کہا گیا کہ وہ کسی قسم کے تشدد کے بغیر وہاں سے چلے جائیں۔

سوڈانی فوج کے ذرائع کے مطابق مسلح افواج میں کسی قسم کے اختلافت نہیں۔ فوج نے مظاہرین کے خلاف تشدد کے استعمال کو مسترد کر دیا ہے۔

خیال رہے کہ سوڈان میں گذشتہ کئی ماہ سے صدر عمر البشیر کے خلاف بڑے بڑے ملک گیر مظاہرے ہوتے رہے ہیں۔ مہنگائی کے خلاف شروع ہونے والا احتجاج حکومت اور صد البشیر کی برطرفی کے مطالبے میں تبدیل ہو گیا تھا۔ صدر عمر البشیر نے ملک سیاسی اور اقتصادی اصلاحات کا اعلان کرنے بعد ملک میں ہنگامی حالت نافذ کر دی تھی۔ تاہم اس کے باوجود ملک میں صدر کے خلاف مظاہرے بدستور جاری ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں