.

برطانیہ: وکی لیکس کے بانی جولیان اسانج لندن میں ایکواڈور کے سفارت خانے سے گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانیہ کے دارالحکومت لندن میں پولیس نے وکی لیکس کے بانی جولیان اسانج کو ایکواڈور کے سفارت خانے سے جمعرات کے روزگرفتار کر لیا ہے۔ان کی گرفتاری برطانیہ کی ایک عدالت کی جانب سے 2012ء میں جاری کردہ وارنٹ گرفتاری کے تحت عمل میں آئی ہے۔

پولیس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ جولیان اسانج وسطی لندن کے ایک تھانے میں زیر حراست ہیں ۔انھیں ویسٹ منسٹر مجسٹریٹ کی عدالت میں جلد پیش کیا جارہا ہے اور وہ تب تک تھانے ہی میں رہیں گے۔

جولیان اسانج اگست 2012ء سے ایکواڈور کے سفارت خانے کے احاطے ہی میں پناہ گزین کے طور پر رہ رہے تھے اور وہ اس خدشے کے پیش نظر وہاں سے نکلتے نہیں تھے کہ انھیں گرفتار کر لیا جائے گا اور پھر انھیں امریکا کے حوالے کیا جاسکتا ہے۔ وہ امریکا کو وکی لیکس کے ذریعے ہزاروں خفیہ فوجی اور سفارتی دستاویزات شائع کرنے کے الزام میں مطلوب ہیں ۔

قبل ازیں ایکواڈور کے صدر نے کہا کہ حکومت جولیان اسانج کی پناہ گزین کی حیثیت ختم کررہی ہے ۔انھوں نے بین الاقوامی کنونشن کی خلاف ورزیوں کا حوالہ دیا ہے۔وکی لیکس کے مطابق اس کے بعد ایکواڈور کے سفیر نے پولیس کو اسانج کو گرفتار کرنے کے لیے بلا بھیجا تھا۔

برطانوی حزب اختلاف لیبر پارٹی نے ٹویٹر پر اطلاع دی ہےکہ وزیر داخلہ ساجد جاوید پارلیمان ( دارالعوام) میں آج اسانج کی گرفتاری سے متعلق بیان دے رہے ہیں۔