سوڈان کی حکمراں فوجی کونسل اقتدار شہریوں کے حوالے کردے گی: جنرل عبدالفتاح البرہان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سوڈان کے نئے فوجی حکمراں لیفٹیننت جنرل عبدالفتاح البرہان نے کہا ہے کہ ان کے زیر ِقیادت فوجی کونسل اقتدار شہریوں کے سپرد کرنے کے لیے پُرعزم ہے۔

جنرل برہان نے اتوار کو سرکاری ٹیلی ویژ ن سے نشر ہونے والے اپنے پہلے انٹرویو میں واضح الفاظ میں کہا ہے کہ ’’ کونسل عوام کو اقتدار منتقل کرنے کا پختہ عزم رکھتی ہے‘‘۔ انھوں نے کہا کہ فوجی کونسل احتجاجی تحریک کے قائدین کے پیش کردہ مطالبات کا ایک ہفتے کے اندر جواب دے گی ۔

انھوں نے انٹرویو میں اس بات کی بھی تصدیق کی ہے کہ معزول صدر عمر حسن البشیر اور ان کے زیر قیادت سابق حکومت میں شامل سینیر عہدے داروں کو جیل بھیج دیا گیا ہے۔

لیفٹیننٹ جنرل عبدالفتاح البرہان عبدالرحمان نے 12 اپریل کو سوڈان کی عبوری فوجی کونسل کے نئے سربراہ کی حیثیت سے حلف اٹھایا تھا۔ انھوں نے اپنے پہلے نشری خطاب میں کہا تھا کہ حزبِ اختلاف کے ساتھ مشاورت کے بعد ایک سول حکومت قائم کی جائے گی۔انھوں نے وعدہ کیا تھا کہ عبوری دور زیادہ سے زیادہ دو سال کے لیے ہوگا۔

انھوں نے اپنے پیش رو وزیر داخلہ عوض بن عوف کے نافذ کردہ کرفیو کی تنسیخ کا اعلان کیا تھا اور معزول صدر کے نافذ کردہ ہنگامی حالت کے قانون کے تحت گرفتار کیے گئے تمام قیدیوں کو بھی رہا کرنے کا حکم دیا تھا۔سبکدوش وزیر داخلہ عوض بن عوف ہی نے 11 اپریل کو سابق مطلق العنان صدر عمر البشیر کو معزول کرکے گرفتار کیا تھا لیکن فوجی کونسل نے ایک روز بعد انھیں بھی چلتا کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں