.

لیبیا کی قومی وفاق حکومت کو داعش اور القاعدہ کی مدد حاصل ہے: المسماری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا میں جنرل خلیفہ حفتر کی فوج کے ترجمان میجر جنرل احمد المسماری نے کہا ہےکہ سرکاری فوج اور قومی وفاق حکومت کی فورسز کے درمیان دارالحکومت طرابلس میں مختلف محاذوں بالخصوص العزیزیہ میں الکسارات کے مقام پر گھسان کی جنگ جاری ہے۔انہوں‌نے الزام عاید کیا کہ قومی وفاق حکومت طرابلس پر قبضہ قائم رکھنے کے لیے القاعدہ اور داعش سے مدد لے رہی ہے۔

العربیہ کے مطابق ہفتے کے روز ایک پریس کانفرنس سے خطاب میں جنرل حفتر کی فوج کے ترجمان نے کہا کہ قومی اتحاد کی حکومت کو داعش، القاعدہ اور دیگر اجرتی قاتل جنگجوئوں‌کی مدد حاصل ہے اور ان کی معاونت سے لڑ رہی ہے۔

المسماری نے مزید کہا کہ قومی وفاق کی فورسز سرکاری فوج کے اندر گھنسے اور دہشت گردوں کے ذریعے حملے کررہی ہے۔ ان کا کہنا تھاکہ سرکاری فوج کی فضائیہ کی مدد سے بری فوج طرابلس کی طرف مسلسل پیش قدمی کررہی ہے۔

جنرل المساری کاکہنا تھاکہ ہفتے کے روز قومی اتحاد کی حکومت نے جنگی طیاروں، میزائلوں اور بھاری ہتھیاروں سے طرابلس میں مختلف اھداف پر بمباری کی۔ انہوں‌نے کہا کہ سرکاری فوج گھمسان کی لڑائی میں بھی طرابلس پرقبضے کےلیے مسلسل پیش قدمی کررہی ہے۔ ان کا کہناتھا کہ طرابلس میں قومی وفاق حکومت کےزیرانتظام فوج اور پولیس کے تمام کیمپوں پر دہشت گردوں کا قبضہ ہے۔