جاپان کے نئے شہنشاہ مسند اقتدار پر فائر ہو گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جاپان میں نئے شہنشاہ نارو ہیتو نے بدھ کے روز سرکاری طور پر تخت سنبھال لیا ہے۔ اس موقع پر نارو کا کہنا تھا کہ انہیں اپنے کندھوں پر آنے والی بھاری ذمے داری کا احساس ہے۔ انہوں نے قوم کی علامت کے طور پر اور عوام کی وحدت کے لیے کام کرنے کا عزم ظاہر کیا۔

سابق شہنشہاہ اَکی ہیتو 3 دہائیوں تک تخت پر براجمان رہنے کے بعد منگل کے روز ایک سادہ سی تقریب میں دست بردار ہو گئے۔ اکی ہیتو نے اس موقع پر جاپانی عوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ قوم نے امن کے لیے کام کیا۔

نئے شہنشاہ نارو ہیتو نے کہا کہ "میں یہ عہد کرتا ہوں کہ ہمیشہ قوم کے بارے میں سوچوں گا اور عوام سے قریب رہوں گا"۔ انہوں نے مزید کہا کہ "میں خلوص نیت کے ساتھ قوم کے لیے مسرت، ملک کے لیے مزید ترقی اور دنیا میں امن وسلامتی کو یقینی بنانے کے حوالے سے پُر امید ہوں"۔

بدھ کے روز مسند اقتدار سنھبالنے کی تقریب میں جاپان کے 59 سالہ نئے شہنشاہ نارو ہیتو کو ایک تلوار پیش کی گئی اور اس کے ساتھ ایک ہیرا دیا گیا۔ ان دونوں کے ساتھ ایک شاہی آئینہ بھی ہوتا ہے۔ یہ تینوں اشیاء مل کر "امپیریل ٹریژر" یعنی شاہی خزانہ کہلاتا ہے۔

سادہ اور مختصر سی تقریب میں نئے شہنشاہ کے قریب ان کے بھائی اور ولی عہد شہزادہ فومی ہیتو بھی کھڑے تھے۔ اس موقع پر نارو ہیتو کی اہلیہ ماساکو موجود نہیں تھیں کیوں کہ روایت کے مطابق تخت سنبھالنے کی تقریب میں شاہی خاندان کی خواتین کی موجودگی کی ممانعت ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں