.

لیبی قومی فوج نے یورپی یونین کا نگران طیارہ مارگرایا، پرتگیزی پائیلٹ واپس بھیجنے کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا میں کمانڈر خلیفہ حفتر کے زیر کمان قومی فوج ( ایل این اے) نے دارالحکومت طرابلس کے جنوب میں یورپی یونین کے نگرانی کے مشن پر محو پرواز ایک فوجی طیارے کو مارگرایا ہے اور اس کے پرتگیزی پائیلٹ کو فوری طور پر واپس کرنے کا اعلان کیا ہے۔

لیبی قومی فوج نے ابتدائی اطلاعات کے حوالے سے بتایا ہے کہ یہ یورپی یونین کا ایک نگران طیارہ تھا اور یہ بحر متوسط سے غیر قانونی تارکین وطن کی اسمگلنگ کے لیے استعمال ہونے والی آبی گذرگاہوں کی نگرانی پر مامور تھا۔

ایل این اے کے ترجمان کرنل احمد مسماری نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ ہم پرتگیزی ہواباز کو اس کے زخموں کے علاج کے فوری بعد اس کے ملک کے حوالے کردیں گے۔ہم غیر قانونی تارکین ِوطن سے نمٹنے کے لیے اپنے یورپی بھائیوں کے کام کو سراہتے ہیں‘‘۔

انھوں نے کہا کہ ’’ ہم پرتگیزی پائیلٹ کے تحفظ کا خیال رکھ رہے ہیں اور اس کے ساتھ قیدی کے بجائے ایک مہمان کا سا سلوک کررہے ہیں۔جو کچھ ہوا ہے ، وہ غلطی کا نتیجہ تھا کیونکہ ہم حالتِ جنگ میں ہیں۔ہم اس کو فوری طور پر یورپی صوفیہ آپریشن کے حوالے کردیں گے‘‘۔

قبل ازیں اس پائیلٹ کی قومیت کے بارے میں متضاد اطلاعات سامنے آئی تھیں اور بعض میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ وہ اطالوی ہے ۔ العربیہ نے اس پائیلٹ کی ایک ویڈیو دیکھی ہے،اس میں اس کے سر پر زخم نظر آرہا ہے ۔ وہ اپنا نام بتا رہا ہے اور یہ کہہ رہا ہے کہ اس کا تعلق پرتگال سے ہے۔

خلیفہ حفتر کے زیر قیادت مشرقی لیبیا سے تعلق رکھنے والی فورسز نے اپریل کے اوائل میں دارالحکومت طرابلس پر قبضے کے لیے چڑھائی کردی تھی۔اس کی طرابلس میں قومی اتحاد کی حکومت کے تحت فوج کے خلاف لڑائی جاری ہے مگر اس کو کامیابی نہیں ملی ہے-