بھارت کے زیرانتظام مقبوضہ ریاست کشمیر میں تین سالہ بچی کی عصمت ریزی کے خلاف مظاہرے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

بھارت کے زیر انتظام ریاست مقبوضہ جموں وکشمیر میں ایک تین سالہ بچی کی عصمت ریزی کے واقعے کے خلاف سوموار کے روز ہنگامے پھوٹ پڑے ہیں اور بھارتی فورسز کے ساتھ جھڑپوں میں دس سے زیادہ مظاہرین زخمی ہوگئے ہیں۔

بچی کی عصمت ریزی کا یہ دل خراش واقعہ دارالحکومت سری نگر سے شمال میں واقع علاقے سنبل میں گذشتہ بدھ کو پیش آیا تھا۔وہاں ایک کار مکینک اپنے ہمسایوں کی کم سن بچی کو بہلا پھسلا کر نزدیک واقع ایک اسکول کے طہارت خانے (ٹائیلٹ )میں لے گیا تھا اور وہاں اس نے اس کو اپنی جنسی ہوس کا نشانہ بنا ڈالا تھا۔اس ملزم کی عمر بیس بتائی جاتی ہے اور اس کو گرفتار کیا جاچکا ہے۔

سوموار کو یہ اطلاع منظر عام پر آئی تھی کہ ایک اور اسکول کے پرنسپل نے اس ملزم کی کم عمری کا سرٹی فکیٹ جاری کردیا ہے ۔اس میں اس کو کم سن ظاہر کیا گیا تھا ۔اس اطلاع پر لوگوں میں غم وغصے کی لہر دوڑ گئی اور انھوں نے کشمیر کے مختلف شہروں اور قصبوں میں احتجاجی مظاہرے شروع کردیے۔

ریاست کے اعلیٰ پولیس افسر سویام پرکاش پنی نے ایک بیان میں اس امر کی تصدیق کی ہے کہ سری نگر اور دوسرے شہروں میں مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے سرکاری سکیورٹی فورسز نے اشک آور گیس کے گولے پھینکے ہیں اور پیلٹ گولیاں چلائی ہیں جس سے دس بارہ افراد زخمی ہوگئے ہیں۔ان میں ایک کی حالت تشویش ناک ہے۔

مسٹر پنی نے مزید بتایا ہے کہ مذکورہ اسکول پرنسپل کے خلاف الگ سے مقدمہ درج کر لیا گیا ہے اور اس کو بھی پوچھ تاچھ کے لیے حراست میں لے لیا گیا ہے۔

آج پوری مقبوضہ وادی میں بچی سے جنسی زیادتی کے واقعے کے خلاف احتجاج کے طور پر تمام اسکول ، دکانیں اور کاروباری مراکز بند تھے۔ تین جامعات میں سیکڑوں طلبہ نے بھی واقعے کے خلاف احتجاجی مظاہرے کیے اور انھوں نے ملزم کو کڑی سزا دینے کا مطالبہ کیا اور اسکول پرنسپل کے خلاف بھی کارروائی کا مطالبہ کیا۔وکلاء نے بھی متاثرہ بچی سے اظہار یک جہتی کے لیے عدالتوں کا بائیکاٹ کیا ہے اور وہ اپنے کیسوں کی پیروی کے لیے پیش نہیں ہوئے۔

ریاست کی حرّیت پسند قیادت نے اس واقعے کی شدید مذمت کی ہے ۔میر واعظ عمر فاروق نے اس واقعے کو انسانیت مخالف جرم قرار دیا ہے۔بزرگ حرّیت لیڈر سید علی شاہ گیلانی نے اس جرم کو پورے شورش زدہ علاقے کے سماجی ڈھانچے پر ایک سیاہ دھبّا قراردیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں