سری لنکا میں مسلم مخالف فسادات کے بعد ملک گیر رات کا کرفیو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سری لنکا میں پولیس نے مسلم مخالف فسادات کے ایک روز بعد منگل کو دوسری رات بھی ملک گیر کرفیو نافذ کردیا ہے۔گذشتہ روز ملک کے مختلف علاقوں میں مسلم مخالف فسادات میں ایک شخص ہلاک ہوگیا تھا اور بلوائیوں نے مسلمانوں بیسیوں دکانوں ، مکانوں اور مساجد کو نقصان پہنچا یا تھا۔

پولیس کے ترجمان روون گنا سکیرا نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ملک بھر میں رات 9.00 بجے ( گرینچ معیاری وقت 15:30 جی ایم ٹی) سے کرفیو کا آغاز ہوا ہے اور یہ فسادات سے سب سے زیادہ متاثرہ شمال مغربی صوبے میں زیادہ وقت کے لیے نافذ العمل رہے گا۔

حکومت نے شہریوں کو ایک ٹیکسٹ پیغام کے ذریعے ملک بھر میں کرفیو کے نفاذ کی اطلاع دی ہے۔

سری لنکا کے ضلع پٹولام میں سوموار کے روز مشتعل بلوائیوں نے ایک 45 سالہ مسلمان کو تشدد کا نشانہ بنایا تھا ۔اس کو شدید زخمی حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا تھا ، جہاں وہ پہنچتے ہی اپنے زخموں کی تاب نہ لا کر دم توڑ گیا تھا۔سری لنکا میں مسلمانوں کے خلاف یہ ہنگامے اور بلوے ایسٹر کے موقع بم دھماکوں کے ردعمل میں ہوئے ہیں۔ کولمبو اور دوسرے شہروں میں ایسٹر پر بم دھماکوں میں 253 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں