.

حوثیوں کے پاس بیلسٹک میزائل پڑوسی ملکوں‌ کے لیے‌ خطرہ ہیں: عرب اتحاد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں آئینی حکومت کی رٹ بحالی میں تعاون فراہم کرنے والےعرب فوجی اتحاد کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے کہا ہے کہ حوثی باغیوں کا بیلسٹک میزائل حاصل کرنا خطے کے ممالک کی سلامتی کے لیے خطرہ ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایرانی حمایت یافتہ دہشت گردوں کے پاس بیلسٹک میزائلوں کی موجودگی پڑوسی ملکوں کے لیے تباہ کن ہو سکتا ہے۔

ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے عرب اتحاد کے ترجمان نے مزید کہا کہ حوثیوں کا بیلسٹک میزائل حاصل کرنا نہ صرف یمن بلکہ پڑوسی ملکوں‌ کے لیے بھی خطرہ بن سکتا ہے۔ انہوں‌ نے انکشاف کیا کہ حالیہ کچھ عرصے میں یمن کی سرکاری فوج نے حوثیوں کے اسلحہ ڈپو تک رسائی حاصل کر کے 300 سے 500 کلومیٹر تک مار کرنے والے میزائل قبضے میں لیے تھے۔

ادھر دوسری جانب لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ حوثیوں کو 'فاتح' نامی ڈرون طیارے فراہم کرنے کا دعویٰ کر چکی ہے۔ کرنل المالکی نے کہا کہ عرب اتحاد یمن کے حوثی شدت پسندوں کے ڈرونز سے نمٹنے میں کسی قسم کی نرمی نہیں برتے گا۔

خیال رہے کہ یمن کے حوثی باغی سعودی عرب پر بیلسٹک میزائلوں سے حملوں کے ساتھ ساتھ بغیر پائیلٹ جاسوسی طیاروں کے ذریعے مسلسل حملے کر رہے ہیں۔ حوثی ملیشیا کی جانب سے سعودی عرب اور یمنی فوج کے خلاف ڈرون طیاروں کے استعمال نے یمن کے بحران کو مزید گھمبیر کر رکھا ہے۔