.

برقی پستول سے کرنٹ لگا کر بچوں کی تادیب کرنے والا جاپانی گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جاپانی پولیس نے حال ہی میں ایک 45 سالہ شخص کو حراست میں لیا ہے۔ اس پر الزام تھا کہ وہ اپنے بچوں کی تادیب کے لیے انہیں برقی پستول بجلی کے جھٹکے لگاتا ہے۔

بچوں‌ پر جسمانی تشدد کی روک تھام کے کے لیے بنائے جاپانی قانون کی روشنی میں اپنی نوعیت کا یہ انوکھا واقعہ ہے جس میں والد پر اپنی اولاد کی اصلاح کے لئے ان کے خلاف تشدد کے ممنوعہ طریقے استعمال کرنے کی شکایت سامنے آئی ہے۔

ایک پولیس عہدیدار نے 'رائیٹرز' کو بتایا کہ جنوبی شہر کیٹاکیوشو کے رہائشی 45 سالہ ایک شہری نے گرفتاری کے بعد پولیس کو بتایا کہ اس نے سترہ اور تیرہ سال کی دو بیٹیوں اور ایک 11 سالہ بیٹے کو تادیب سکھانے خاطر برقی پستول سے بجلی کے جھٹکے لگائے۔ گرفتار شخص نے کہا کہ اس نے ایسا اس وقت کیا جب بچوں‌ نے اس کے وضع کردہ ضابطوں کی خلاف ورزی کی۔

پولیس کے مطابق بجلی کے کرنٹ سے ایک بچے کے بازو پر معمولی جلن ہوئی ہے جب کہ دونوں لڑکیوں‌ پر بظاہر کوئی جسمانی اثر نہیں‌ پڑا۔ جاپان میں بچوں کے ساتھ بدسلوکی کے واقعات میں حالیہ برسوں کے دوران اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ گذشتہ برس ایک والد نے بچوں کو کھانا کھانے کا طریقہ بتاتے ہوئے تشدد کیا جس کے نتیجے میں وہ جان سے ہاتھ دھو بیٹھی بیٹھے۔

جاپانی پارلیمنٹ‌ نے منگل کے روز بچوں کو ان کے والدین کی جانب سے جسمانی تشدد کا نشانہ بنائے جانے پر پابندی کا نیا قانون منظور کیا ہے۔