.

یورپی یونین کی خلیج عمان میں دوآئیل ٹینکروں پرحملوں کے بعد ضبط وتحمل سے کام لینے کی اپیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یورپی یونین نے خلیج عمان میں دو تیل بردار بحری جہازوں پر حملوں کے بعد مزید کشیدگی سے گریز اور زیادہ سے ضبط وتحمل سے کام لینے کی اپیل کی ہے۔

یورپی یونین کی خارجہ امور کی سربراہ فیڈریکا مغرینی کی خاتون ترجمان ماجا کوچی جانچیک نے جمعرات کو ایک بیان میں کہا ہے کہ’’ خطے کو عدم استحکام اور کشیدگی کے لیے مزید عناصر کی ضرورت نہیں ہے۔اس لیے ان (مغرینی ) کا اور ہمارا مطالبہ ہے کہ زیادہ سے زیادہ ضبط وتحمل سے کام لیا جائے اور کسی بھی قسم کی اشتعال انگیزی سے گریز کیا جائے‘‘۔

ٹینکر ایسوسی ایشن انٹر ٹینکو کی اطلاع کے مطابق مشرقِ اوسط میں دو تیل بردار جہازوں پر حملہ کیا گیا ہے۔اس کے بعد سے آبنائے ہرمز سے گذرنے والے بحری جہازوں اور ان کے عملہ کے تحفظ کے بارے میں تشویش میں مزید اضافہ ہوگیا ہے۔

خلیج عمان میں ان دو آئیل ٹینکروں پر حملہ کیا گیا ہے ۔اس کے بعد عالمی منڈی میں تیل کی قیمتوں میں چار فی صد اضافہ ہوگیا ہے۔گذشتہ ماہ بھی اسی علاقے میں خلیج عمان میں چار تیل بردار بحری جہازوں پر بارودی سرنگوں سے حملہ کیا گیا تھا۔ان میں دو بحری جہاز سعودی عرب کے تھے۔ایک ناروے اور ایک متحدہ عرب امارات کا تھا۔

انٹر ٹینکو کے چئیر مین پاؤلو ڈی آمیکو نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ تنظیم کے رکن دو بحری جہازوں پر آج صبح حملوں کے بعد سے مجھے آبنائے ہرمز سے گذرنے والے عملہ کے تحفظ کے بارے میں گہری تشویش لاحق ہوگئی ہے‘‘۔

انھوں نے مزید کہا :’’ ہمیں یہ باور ہونا چاہیے کہ دنیا کا قریباً تیس فی صد خام تیل آبنائے ہُرمز سے ہو کر گذرتا ہے۔اگر پانی محفوظ نہیں رہتے تو پھر پوری مغربی دنیا کے لیے تیل کی رسد خطرے سے دوچار ہوسکتی ہے‘‘۔ واضح رہے کہ انٹر ٹینکو تنظیم دنیا میں سب سے بڑے آزاد بحری بیڑے کی نمایندگی کرتی ہے۔