.

بنغازی بلدیہ نے دکانوں سے ترک نام ہٹا دیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مشرقی لیبیا کے شہر بنغازی کی میونسپلٹی نے شہر کے قھوی خانوں، ریستوران اور مٹھائی فروخت کرنے والی دکانوں سے ترکی زبان میں تحریر ناموں کو ہٹانے کی مہم شروع کر دی ہے۔

بنغازی شہر کی میونسپل گارڈ سروس کے میڈیا آفس کے مطابق لیبی فوج کے سربراہ خلیفہ حفتر کی ہدایت پر شہر کی تمام دکانوں سے پر تحریر ترک مصنوعات کے تمام برینڈ نام ہٹانے کے لئے بلدیہ کی گارڈ سروس حرکت میں آئی ہے۔ یہ فیصلہ ترکی کی بائیکاٹ مہم کے سلسلے میں کیا گیا ہے۔

بنغازی میں ترک فاسٹ فوڈ، کھانے پینے اور مٹھائی فروخت کی بہت زیادہ دکانیں ہیں۔شاہراہ وینس میں کپڑوں کے فروخت کی دکانوں پر ترک ٹریڈ مارک اور برینڈز کے نام نمایاں طور پر گاہوں کی توجہ کے لئے آویزاں ہیں۔

لیبی فوج کی جنرل کمان نے جمعہ کے روز حکم جاری کیا کہ لیبیا میں موجود کسی بھی شہری کو گرفتار کر لیا جائے۔ نیز علاقائی سمندری حدود میں ترک بحری جہازوں کو نشانہ بنایا جائے اور لیبی ہوائی اڈوں سے ترکی کے لئے پروازوں پر پابندی عائد کر دی گئی تھی۔

اس کشیدگی کی وجہ طرابلس کی آزادی کا معرکہ لڑنے والی مسلح ملیشیاؤں کو براہ راست ترک امداد، اسلحہ اور فوجی ساز وسامان کی فراہمی ہے۔ نیز یہ بھی الزام ہے کہ ترکی ان ملیشیاؤں کو بغیر پائیلٹ ڈرون طیارے بھی فراہم کر رہا ہے۔