.

سلامتی کونسل کا لیبیا میں متحارب فریقین سے فوری جنگ بندی کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عالمی سلامتی کونسل نے لیبیا کے دارالحکومت طرابلس میں تاجوراء مہار کیمپ پر گذشتہ منگل کے روز کیے گئے ایک فضائی حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے لیبی حکومت اور فوج کے درمیان جاری لڑائی بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

جُمعہ کے روز سلامتی کونسل کے ہنگامی اجلاس میں لیبیا میں متحارب فریقین پر فوری جنگ بندی پر زور دیا گیا۔ اجلاس کے بعد جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ واشنگٹن کی طرف سے طرابلس میں ایک مہاجر کیمپ پر بمباری کی مذمت سے متعلق بیان کسی واضح سبب کے بغیر موخر کر دیا گیا تھا۔ اس کے باوجود سلامتی کونسل اس واقعے کی مذمت کے ساتھ فریقین پر جنگ بندی پر زور دیتی ہے۔

بیان میں‌ لیبیا کی اقوام متحدہ کی جانب سے تسلیم شدہ قومی وفاق حکومت اور جنرل ریٹائرڈ خلیفہ حفتر کی قیادت میں قائم نیشنل آرمی کے درمیان فوری مذاکرات کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ لیبیا میں دیرپا امن و استحکام تمام قوتوں پر مشتمل سیاسی پروگرام تشکیل دینے میں مضمر ہے۔ اس حوالے سے افریقی یونین، عرب لیگ دوسرے ممالک کی مساعی قابل قدر ہیں۔

خیال رہے کہ اپریل کے اوائل سے لیبیا میں جنرل خلیفہ حفتر کی قیادت میں طرابلس پر چڑھائی کے بعد سلامتی کونسل کا یہ پہلا بیان ہے جس میں فریقین پر فوری جنگ بندی کی ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ گذشتہ منگل کو دارالحکومت طرابلس میں غیر قانونی مہاجرین کے ایک مرکز پر جنگی طیاروں‌ نے بمباری کی تھی جس کے نتیجے میں 53 افراد ہلاک اور سیکڑوں زخمی ہوگئے تھے۔ جنرل خلیفہ حفتر اور قومی وفاق حکومت کی حامی ملیشیا کے درمیان جاری لڑائی کے دوران اب تک ایک ہزار افراد جنگ کا ایندھن بن چکے ہیں۔