.

سوڈانی مسلمان جس کی حج کی تیاری میں ربع صدی لگ گئی!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

'الحمد للہ میں فریضہ حج کی ادائی کے لیے آخر کار مکہ معظمہ پہنچ چکا ہوں' ۔ یہ الفاظ اس سوڈانی مسلمان کے ہیں جو فریضہ حج کی ادائی کے لیے ربع صدی سے کوشاں رہا۔ پچیس سالہ تگ ودو کے بعد وہ حج اور طواف بیت اللہ، سعی اور دیگر مناسک حج ادا کرے گا۔

آزمائشوں اور مشکلات سے بھرپور سوڈانی مسلمان کی زندگی میں حج اس کا ایک دیرینہ خواب تھا جو اب شرمندہ تعبیر ہونے جا رہا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ‌ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ 50 سالہ ابراہیم آدم نے کہا کہ میرا سعودی عرب کا یہ پہلا موقع ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ میں مسلسل 25 سال سے اس لمحے کے انتظار میں تھا۔ پیشے کے اعتبار سے وہ ایک کسان ہے جو مونگ پھلی کی کاشت کر کے اپنے لیے حج کی تیاری کرتا رہا ہے۔

انہوں‌ نے مزید کہا کہ میں ہر سال اپنی آمدن کا کچھ حصہ حج کی تیاری کے لیے جمع کر دیتا تاکہ میں اپنا دیرینہ خواب پورا کرسکوں۔ ابراہیم آدم نے کہا کہ حج کی سعادت میرا دیرینہ خواب تھا اور میں اللہ کے اس عظیم گھر کو اپنی آنکھوں سے دیکھنا چاہتا تھا اور مقصد کے لیے مجھے 25 سال انتظار کرنا پڑا۔