.

امریکا : گاڑی میں بچوں کی موت کے ذمے دار باپ کے خلاف قانونی کارروائی موقوف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

نیویارک کی جنرل پراسیکیوٹر کو جمعرات کے روز ایک امریکی شہری کے خلاف استغاثہ کی جانب سے قانونی کارروائی کی دستاویزات موصول ہوئیں۔ یہ امریکی ایک ہفتہ قبل اپنے دو بچوں کو گاڑی میں بھول گیا تھا۔ آٹھ گھنٹے تک گرمی میں رہنے کے سبب دونوں بچے دم توڑ گئے۔

تفصیلات کے مطابق 39 سالہ جوآن روڈریگز نے 26 جولائی کو کام پر جاتے ہوئے اپنے دو جڑواں بچوں کو ساتھ لے لیا تا کہ انہیں بے بی کیئر سینٹر پہنچا دے۔ تاہم نیویارک شہر کے علاقے برونکس میں صبح آٹھ بجے سینئر فوجیوں کے ہسپتال پہنچنے پر جوآن ایک سالہ لونا اور وینکس کو گاڑی میں ہی بھول گیا۔

شام چار بجے وہ گاڑی میں سوار ہوا تو اسے خیال آیا کہ دونوں بچے صبح گاڑی میں رہ گئے تھے اور انہوں نے سارا دن گاڑی میں ہی گزارا ... دونوں بچوں کا سانس رک چکا تھا۔ اس موقع پر جوآن فورا گاڑی سے اتر کر چلاّنے لگا کہ "میں بھول گیا ! میں نے اپنے بچوں کو مار ڈالا !"۔ جوآن کو گذشتہ جمعے کے روز حراست میں لیا گیا اور اگلے دن وہ ضمانت پر رہا ہو گیا۔ حراستی مرکز سے باہر آنے پر جوآن کے خاندان اور دوستوں بالخصوص بیوی نے اس کا استقبال کیا۔ جوآن کی بیوی نے اپنے شوہر کے لیے معاونت کا اظہار کیا تھا۔

جوآن کی بیوی نے ایک تحریری بیان میں کہا کہ "اگرچہ میری مشکلات تصور سے باہر ہے .. میں اب بھی اپنے شوہر سے محبت کرتی ہوں"۔ جوآن کے دو اور بچے بھی ہیں جن کی عمر 12 اور 16 سال ہے۔ جوآن کی بیوی کا کہنا ہے کہ "وہ ایک اچھا انسان اور بہترین باپ ہے۔ میں جانتی ہوں کہ وہ ہمارے بچوں کو تکلیف پہنچانے والا کوئی بھی کام دانستہ طور نہیں کر سکتا"۔

جمعرات کے روز برونکس میں فوجداری عدالت کے سامنے نیویارک کی جنرل پراسیکیوٹر کے ترجمان ڈارسل کلارک نے جج کو آگاہ کیا کہ گہری تحقیقات کے نتائج کے انتظار میں مقدمے کی موجودہ کارروائی معطل کر دیا جائے۔

سینئر جیوری کے سامنے پیش کرنے کے لیے پہلے فیصلہ کیا جائے گا کہ آیا دعوی دائر کرنے والے فریق کے پاس اتنا مواد ہے جو ملزم کے خلاف قانونی کارروائی کے لیے ضروری ہے۔

اس حوالے سے اگلی سماعت 27 اگست تک کے لیے ملتوی کر دی گئی۔