.

اسرائیلی ارب پتی اور کینیا کی سابق خاتون اول کی کرپشن کی تحقیقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سوئٹرزلینڈ کے پراسیکیوٹر جنرل نے اسرائیلی ارب پتی پر رشوت ستانی اور کرپشن کے الزامات کی تحقیقات کا حکم دیا ہے۔ اس کیس میں شبہ ہے کہ افریقی ملک کینیا کی سابق خاتون اول مامادی توری بھی ملوث ہے۔

سوئس پراسیکیوٹر جنرل کا کہنا ہے کہ ہیرے جواہرات کا کاروبار کرنے والے بیبی شٹائنمٹز اور دو دیگر ملزمان پر مخالف کمپنی کو جواہرات کے ایک ٹھیکے سے باہر رکھنے کے لیے دو ملزمان کو 10 ملین ڈالر کی رشوت دی تھی۔ یہ ٹھیکہ کینیا کے جنوب مشرقی علاقے سیمانڈو میں 2005ء اور 2010ء کے دوران ہیرے جواہرات کی تلاش کے لیے جاری کیا گیا تھا۔

تینوں ملزمان پر رشوت کو پردے میں رکھنے کے لیے جعلی معاہدے اور چیک جاری کیے گئے۔ یہ چیک اور دیگر دستاویزات کینیا کے سابق صدر لانسانا کونٹی کی جانب سے 2008ء کے دوران جاری کیے گئے تھے۔

خیال رہے کہ شٹائنمٹز کو دسمبر 2016ء کو اسرائیلی پولیس نے بھی کرپشن کے الزامات میں حراست میں لیا تھا مگر بعد ازاں انہیں مشروط طور پر رہا کر دیا گیا تھا۔