.

عرب فوجی اتحاد نے یمن کو اغوا ہونے سے بچا لیا: محمد بن زاید

ولی عہد متحدہ عرب امارات کی منیٰ میں سعودی فرمانروا شاہ سلمان سے ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کے ولی عہد الشیخ محمد بن زاید نے کہا ہے کہ سعودی عرب کی قیادت میں یمن دفاع کے لیے قائم فوجی اتحاد یمن کے اغواء کی سازشیں ناکام بنانے کے لیے پورے عزم کے ساتھ کھڑا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اماراتی ولی عہد نے سعودی عرب کے دورے کے دوران خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز سے ملاقات کی۔ ان کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ اور خطے کے امن کو تباہ کرنے والے دشمن کے خلاف سعودی عرب اور امارات ایک دوسرے کے شانہ بہ شانہ کھڑے ہیں۔

الشیخ محمد بن زاید نے کہا کہ سعودی عرب خطے کی امن وسلامتی، استحکام کی خشت اول اور خطرات کے خلاف دفاع کی خشت اول ہے۔ سعودی عرب کو لاحق خطرات کے علاقائی اور عالمی سلامتی پر اثرات مرتب ہوں گے۔ سعودی عرب کی قیادت بالخصوص شاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود کی دانش مندانہ پالیسیوں اور پرعزم اقدامات نے خطے کو امن اور استحکام بخشا۔

اماراتی ولی عہد نے کہا کہ متحدہ عرب امارات اورسعودی عرب کے درمیان گہرے دوستانہ اور برادرانہ تعلقات قائم ہیں۔ دونوں ملکوں کے تعلقات کی بنیایں گہری، مضبوط اور دور رس ہیں۔ دونوں کی قیادت کو ایک دوسرے پر مکمل اعتبار اور اعتماد ہے۔ دونوں ملک اور قومیں بھائی چارے کےعظیم رشدے میں بندھی ہوئی ہیں۔

محمد بن زاید کا کہنا تھا کہ سعودی عرب کو لاحق خطرات امارات کے خطرات کے مترادف ہیں۔ دونوں ملک خطے کی سلامتی کو دپیش چیلنجز کے خلاف ایک صف میں کھڑے ہیں۔ خطے کی اقوام کو ترقی، بھائی چارے اور امن کی فضاء میں آگے بڑھنے کا حق ہے۔

یمن میں جاری جنگ کے حوالے سے بات کرتے ہوئے اماراتی ولی عہد نے کہا کہ سعودی عرب کی قیادت میں یمن کے لیے قائم کردہ عسکری اتحاد نے یمن کو دشمن کے ہاتھوں اغواء ہونے سے بچا لیا۔ متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب دونوں یمن کے دفاع کے لیے لڑ رہے ہیں۔ ہمارا مقصد یمن پرقبضہ نہیں بلکہ یمنی قوم کا دفاع اور ان کا ملک یمن کی اصل قیادت کے حوالے کرنے میں مدد کرنا ہے۔

انہوں نے یمن میں جاری جنگ کے خاتمے کے لیے تمام فریقین کےدرمیان بامقصد بات چیت کی ضرورت پر بھی زور دیا۔