بھارتی وزیر دفاع نے’پہلے ایٹم بم چلانے‘ کا عندیہ ظاہر کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

بھارتی وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر جاری بیان اور میڈیا سے گفتگو میں ایٹمی ہتھیاروں کے پہلے استعمال کی پالیسی میں تبدیلی کا اشارہ دے دیا۔

حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی انتہائی اہم وزیر کے بیان سے کشمیر کا نیوکلیئر فلیش پوائنٹ ہونا ثابت ہو گیا۔

راج ناتھ سنگھ نے عالمی برادری کو دھمکی دیتے ہوئے کہا کہ بھارت اب تک ایٹم بم کے ’نو فرسٹ یوز‘ کی پالیسی پر قائم رہا ہے، مستقبل میں کیا ہو گا؟ اس کا انحصار حالات پر ہے۔

بھارتی وزیر دفاع کے خطرناک اور انتہا پسند سوچ پر مبنی بیان پر سوال اٹھ رہا ہے کہ کیا بھارت نے اقوام عالم کو سیکیورٹی کونسل کی میٹنگ سے پہلے دھمکی دی ہے؟

بھارت نے 1974 میں تمام بین الاقوامی قوانین کی دھجیاں بکھیرتے ہوئے ایٹمی دھماکا کر کے جنوبی ایشیا کا امن خطرے میں ڈال دیا تھا۔ بھارت کو اس عمل سے باز رکھنے کے لیے 1974 میں نیوکلیئر سپلائرز گروپ کا قیام عمل میں آیا۔

بھارت اپنی ہٹ دھرمی پر قائم رہا، اس نے 11 اور 13 مئی 1998 میں 5 ایٹمی دھماکے کئے، نئی دہلی نے اس اقدام سے این پی ٹی، سی ٹی بی ٹی پر عالمی معاہدوں اور قوانین کو سبوتاژ کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں