.

مصر:سوشل میڈیا پر انسانی اعضاء کی خریدوفرخت کا دَھندا کرنے والا ملزم گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی سیکیورٹی فورسز نے سماجی روابط کی ویب سائٹ 'فیس بک' کے ذریعے انسانی اعضاء کا دھندا کرنے والے ایک ملزم کو گرفتار کر لیا ہے۔

مصری وزارت داخلہ کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ شمالی علاقے کفر الشیخ سے تعلق رکھنے والا ایک شخص کچھ عرصے سے انٹرنیٹ پر انسانی اعضاء کی خریدو فروخت کا دھندا کررہا تھا۔ اس نے اس گھناؤنے جرم کی ترویج کے لیے 'فیس بک' پر ایک صفحہ بنا رکھا تھا جہاں وہ انسانی اعضاء کی خرید و فروخت کی مکروہ سرگرمیوں میں مصروف تھا۔

سیکیورٹی اداروں کی جانب سے چھان بین کے دوران پتا چلا کہ انسانی اعضاء کی خریدو فروخت کرنے والا شخص ایک زرعی ملازم ہے جو کفر الشیخ پولیس تھانے کے احاطے میں قیام پذیر ہے۔ پولیس نے اس کا موبائل فون قبضے میں لے لیا ہے۔ موبائل فون سے بھی اس کے انسانی اعضاء کی خرید و فروخت میں ملوث ہونے کے شواہد ملے ہیں۔

ملزم نے اعتراف کیا ہے کہ اس نے اپنے مکروہ دھندے کے لیے فیس بک پر جعلی اکاؤنٹ بنا رکھا تھا۔ پولیس نے ملزم سے تفتیش شروع کر دی ہے۔

واضح رہے کہ دو سال قبل مصری پولیس نے انسانی اعضاء کی خرید و فروخت میں ملوث ایک گینک کا سراغ لگایا تھا اور اس میں ملوث 12 ڈاکٹروں اور 8 نرسوں سمیت 41 افراد کو گرفتار کیا تھا۔