.

امریکا: سعودی آرامکو کی تنصیبات پر حوثیوں کے ڈرون حملوں کی شدید مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں متعیّن امریکی سفیر جان ابی زید نے سعودی آرامکو کی دو تنصیبات پر یمن کے حوثی شیعہ باغیوں کے ڈرون حملوں کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔

سعودی عرب میں امریکی مشن کے سرکاری ٹویٹر اکاؤنٹ پر انھوں نے ہفتے کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’امریکا آج بقيق اورخريص میں تیل کی تنصیبات پر ڈرون حملوں کی شدید مذمت کرتا ہے۔اہم انفرااسٹرکچر کے خلاف ان حملوں سے شہریوں کی زندگیاں خطرے سے دوچار ہوگئی ہیں۔یہ بالکل ناقابل قبول ہیں۔ جلد یا بدیر ان کے نتیجے میں بے گناہ شہریوں کی زندگیوں کا ضیاع ہوگا۔‘‘

متحدہ عرب امارات ( یو اے ای) نے بھی سعودی عرب میں آرامکو کی تیل کی دو تنصیبات پر ڈرون حملوں کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ سعودی عرب کے تحفظ اور سلامتی کے لیے کوئی خطرہ یو اے ای کی سلامتی اور تحفظ کے لیے بھی خطرہ ہے۔

یو اے ای کی وزارت خارجہ نے کہا ہے:’’یہ حملے اس امر کا ثبوت ہیں کہ دہشت گرد گروپ خطے کی سلامتی اور استحکام کو نقصان پہنچانے کے درپے ہیں۔‘‘

سعودی عرب کی وزارت دفاع کی اطلاع کے مطابق ڈرون حملوں سے سعودی آرامکو کی دو تنصیبات میں آگ لگ گئی تھی اور اس آگ پر قابو پالیا گیا ہے۔

ان میں ایک تنصیب مملکت کے مشرقی صوبے میں الدمام شہر کے نزدیک واقع بقیق میں ہے اور دوسری تنصیب ہجرۃ خريص آئل فیلڈ میں واقع ہے۔

وزارت داخلہ کے بیان کے مطابق ’’ہفتے کو علی الصباح چار بجے آرامکو کی صنعتی سکیورٹی ٹیمیں کمپنی کی بقیق اور خریص میں واقع دو تنصیبات میں لگی آگ پر قابو پانے کے لیے کوشاں تھیں۔انھیں ڈرون سے نشانہ بنایا گیا تھا۔دونوں جگہوں پر لگی آگ پر قابو پالیا گیا ہے اور متعلقہ حکام نے ان ہر دو واقعات کی تحقیقات شروع کردی ہے۔‘‘