.

روسی S-400 میزائل سسٹم کی دوسری بیٹری ترکی کے حوالے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی کی وزارت دفاع کے مطابق روسی S-400 میزائل دفاعی سسٹم کی دوسری بیٹری انقرہ کے حوالے کیے جانے کا عمل اتوار کے روز مکمل ہو گیا ،،، یہ نظام اپریل 2020 میں کام شروع کر دے گا۔

امریکا کی ممکنہ پابندیوں سے خبردار کیے جانے کے باجود مذکورہ سسٹم کے اولین حصے جولائی میں انقرہ کے حوالے کر دیے گئے تھے۔

ترکی نے نیٹو اتحاد میں اپنے حلیف امریکا کی جانب سے شدید اعتراضات کے باوجود روسی سسٹم کی خریداری پر ڈٹے رہنے کا مظاہرہ کیا۔

واشنگٹن کا کہنا ہے کہ روسی میزائل نیٹو کے سسٹم کے ساتھ متصادم ہیں اور یہ امریکا کے زیر قیادت F-35 لڑاکا طیارے کے پروگرام کے لیے خطرہ ہے۔

واشنگٹن نے F-35 طیارے کے پروگرام میں ترکی کی شرکت کو معطل کر دیا اور انقرہ پر پابندیاں عائد کرنے کی دھمکی بھی دی۔

یاد رہے کہ روس نے S-400 سسٹم کی پہلی بیٹری رواں سال جولائی میں انقرہ میں واقع "مورٹیڈ" فضائی اڈے کے حوالے کی تھی۔

ترکی کے وزیر خارجہ مولود چاوش اولو نے ہفتے کے روز "CNN ترکی" کو بتایا کہ امریکا کی جانب سے بارہا انتباہات کے باوجود یہ سسٹم کام کرے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ترکی امریکا سے پیٹریاٹ میزائل سسٹم کی خریداری پر اب بھی آمادہ ہے۔

ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن نے جمعے کے روز برطانوی خبر رساں ایجنسی کو ایک انٹرویو میں بتایا کہ وہ رواں ماہ ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ "پیٹریاٹ" میزائل کی خریداری کے معاملے کو زیر بحث لائیں گے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ٹرمپ کے ساتھ ان کا ذاتی تعلق S-400 سسٹم کی خریداری سے جنم لینے والے بحران کو حل کرنے میں کامیاب کر دے گا۔