.

ایران پرسعودی یا امریکی حملے کی صورت میں مکمل جنگ چھڑ جائے گی: جواد ظریف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی وزیرخارجہ محمد جواد ظریف نے خبردار کیا ہے کہ امریکا اور سعودی عرب کے ان کے ملک پر کسی بھی حملے کی صورت میں مکمل جنگ چھڑ جائے گی۔

جواد ظریف نے جمعرات کے روز سی این این سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’’میں بہت سنجیدہ بیان دے رہا ہوں اور وہ یہ کہ ہم جنگ نہیں چاہتے ہیں ،ہم فوجی محاذ آرائی میں الجھنا نہیں چاہتے لیکن ہم اپنے علاقے کے دفاع میں بھی کسی غفلت کا مظاہرہ نہیں کریں گے۔‘‘

جواد ظریف نے قبل ازیں ایک ٹویٹ میں کہا کہ ’’امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپیو اقوام متحدہ کے مندوبین کو ویزوں کے اجرا کے معاملے میں امریکی ذمے داریوں سے پہلوتہی کررہے ہیں اور لوگوں کو القابات سے نواز رہے ہیں۔‘‘

انھوں نے اپنے امریکی ہم نصب کو تاریخ سے سبق یاد دلانے کی کوشش کی ہے اور کہا کہ جنوبی افریقا کے لیڈر نیلسن لیڈر کا نام 2008ء تک امریکا کی دہشت گردوں کی واچ لسٹ میں شامل تھا حالانکہ انھیں اس سے پندرہ سال پہلے امن کا نوبل انعام مل چکا تھا۔

ایرانی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ اور اس کے ’’متحرک اتحادیوں‘‘ کو یہ دعا کرنی چاہیے کہ ان کے اپنے مفاد میں جنگ نہ ہو‘‘۔

وہ امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپیو کے ایک بیان کا حوالہ دے رہے تھے جس میں انھوں نے سعودی عرب کی تیل تنصیبات پر حملے کو جنگی کارروائی قرار دیا تھا۔جواد ظریف نے اپنے سرکاری ٹویٹر اکاؤنٹ پرلکھا ہے کہ ’’ٹرمپ انتظامیہ انھیں ( صدر ٹرمپ کو) دھوکا دے رہی ہے۔‘‘