.

عراق میں بدامنی کے بعد ایران نے دو سرحدی گذرگاہیں بند کردیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران نے عراق میں حالیہ بد امنی کے بعد اپنی دو سرحدی گذرگاہیں عارضی طور پر بند کردی ہیں۔ ان میں ایک گذرگاہ کو ایرانی زائرین عراق میں آمدورفت کے لیے استعمال کرتے ہیں۔

ایران کی نیم سرکاری خبررساں ایجنسی مہر نے ایران کے سرحدی محافظوں کے کمانڈر جنرل قاسم رضاعی کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ خسروی اور چا زابہ کی گذرگاہ کو بدھ کی شب سے بند کردیا گیا ہے۔

عراق میں گذشتہ تین روز سے حکومت مخالف احتجاجی مظاہرے جاری ہیں اور ان میں اٹھارہ افراد ہلاک اور سیکڑوں زخمی ہوگئے ہیں۔

ایرانی زائرین سے متعلق امور کے ایک سینیر عہدہ دار نے سرکاری ٹیلی ویژن کو بتایا ہے کہ خسروی کی گذرگاہ بند تھی لیکن دوسری گذرگاہیں شیعہ زائرین کے لیے کھلی تھیں۔

ایرانی وزیر داخلہ عبدالرضا رحمانی فاضلی نے گذشتہ ہفتے کہا تھا کہ قریباً تیس لاکھ ایرانی زائرین کی اس ماہ میں عراق کے جنوبی شہر کربلا میں آمد متوقع ہے جہاں وہ حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ اور دوسرے شہدائے کربلا کے چہلم کی رسوم میں شرکت کریں گے۔