.

خوش خبری: جب چاہیں عزیر واقارب کو سعودی عرب کی سیر کو بلوائیں

ابشر سسٹم کے ذریعے سعودی شہری اور مقیم تارک وطن خود اپنے دوستوں کے میزبان بن سکیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے شہری یا غیر ملکی تارکین وطن اپنے عزیز واقارب کو ’میزبان ویزہ‘ پر مملکت آنے دعوت دے سکیں گے۔ سعودی وزارت حج وعمرہ اور محکمہ پاسپورٹ اس ضمن میں ضابطہ کار تشکیل دینے پر غور کر رہی جس کا اعلان جلد کیا جائے گا۔

معاصر عزیز عرب روزنامہ ’’عکاظ‘‘کے مطابق سعودی شہری اور مقیم غیر ملکی آن لائن سسٹم ’ابشر‘ کے ذریعے اپنی ذاتی ذمہ داری پر سال میں 3 سے 5 افراد کو ’میزبان ویزہ‘ جاری کر سکتے ہیں۔

محکمہ پاسپورٹ کے حکام کے مطابق میزبان ویزے پر آنے والا سعودی عرب میں 90 دن تک قیام کر سکتا ہے۔ اسے سعودی عرب میں نقل وحرکت کی آزادی ہو گی۔ وہ چاہے تو اپنے میزبان کے گھر میں قیام کرے یا پھر چاہے تو ہوٹل یا فلیٹ میں سکونت اختیار کر سکتا ہے۔

میزبان ویزہ کی فیس 500 ریال ہو گی۔ ایک شخص کو سال میں 3 مرتبہ میزبان ویزے پر سعودی عرب آنے کی دعوت دی جا سکتی ہے۔ سعودی عرب میں مقیم غیر ملکی میزبان ویزہ کے لیے آن لائن سسٹم سے رجوع کریں گے۔ اسے کسی محکمے کے دفتر جانے کی ضرورت نہیں ہو گی۔

اطلاعات کے مطابق غیر ملکی تارک وطن سال میں 3 سے 5 افراد کی میزبانی کر سکتا ہے۔ ویزے پر آنے والا شخص مملکت بھر میں جہاں چاہے جا سکتا ہے۔ اسے سیاحتی مقامات کی سیر کرنے کی بھی اجازت ہو گی۔

محکمہ پاسپورٹ نے کہا ہے کہ ’میزبان ویزہ‘ سعودی شہریوں کے شناختی کارڈ جبکہ غیرملکی کے اقامے پر جاری ہوگا۔ ویزے کی میعاد ختم ہونے پر آنے والے شخص کو واپس جانا ہو گا۔ میزبان ویزہ جاری کروانے والے اپنے مہمانوں کی مملکت آمد سے روانگی تک ان کے تمام معاملات کے ذمہ ہوں گے۔