.

یمن: حوثی ذمے دار کی اپنے بھائی کے ہاتھوں پراسرار ہلاکت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے دارالحکومت صنعاء میں باغی حوثی ملیشیا کا ایک اہم رکن عصام ناصر الطبیب پراسرار حالات میں اپنے چھوٹے بھائی کے ہاتھوں مارا گیا۔ وہ عمران صوبے میں حوثی ملیشیا کے زیر انتظام پریوینٹو سیکورٹی کے ادارے میں تحقیقات کا ذمے دار تھا۔

الطبیب کے عزیز و اقارب کے مطابق کارروائی کا مرتکب قاتل حوثی ملیشیا کے زیر انتظام لڑائی کے ایک محاذ سے واپس لوٹا تھا۔

ذرائع نے مذکورہ رشتے داروں کے حوالے سے بتایا ہے کہ لڑائی کے محاذوں سے واپسی کے بعد قاتل کی ذہنی کیفیت کافی خراب تھی۔ مقتول عصام دارالحکومت صنعاء میں اپنے بھائی کو لے کر گھومنے نکلا تھا۔ اس دوران عصام ایک اسٹور سے ضروری چیزیں خریدنے کے لیے گاڑی سے اترا تو اس کے چھوٹے بھائی نے پچھے سے دو گولیاں مار دیں۔ قاتل نے اپنے بھائی کو مردہ پڑا چھوڑا اور اپنی کلاشنکوف وہاں پھینک کر فرار ہو گیا۔

یاد رہے کہ عصام ناصر الطبیب مغوی افراد پر تشدد کے احکامات جاری کرنے کے حوالے سے مشہور تھا۔ وہ ان افراد کو غائب کرا کر انہیں خفیہ جیلوں میں منتقل کرا دیتا تا کہ ان کے اہل خانہ کو بلیک میل کر کے بھاری رقوم ہتھیا سکے۔