لیبی فوج کے حملے میں قومی وفاق حکومت کے 19 جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

لیبیا میں قومی فوج کی بمباری کے نتیجے میں سرت کے علاقے میں 11 شامی جنگجوئوں سمیت 19 حکومت نوازجنگجو ہلاک ہوگئے ہیں۔

العربیہ چینل کی رپورٹ کے مطابق جنرل خلیفہ حفتر کی کمان میں فوجی طیاروں نے سرت میں مغربی زلیتن کے مقام پر بمباری کی جس کے نتیجے میں قومی وفاق حکومت کے وفادار 19 جنگجو ہلاک ہوگئے۔

جمعہ کے روز طرابلس اور مصراتۃ کے محاذوں پر شدید بمباری اور گھمسان کی لڑائی جاری رہی۔ اطلاعات کے مطابق ترکی کی لیبیا میں مداخلت کے بعد کشیدگی مزید بڑھ گئی ہے۔

نیشنل آرمی کے میڈیا سینٹر کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ جنوبی طرابلس میں مختلف محاذوں پر بمباری کی گئی ہے۔

العالمی شہر کے مغرب میں الرملہ کے مقام پر قومی وفاق حکومت اور نیشنل آرمی کے درمیان لڑائی میں قومی وفاق کو بھاری مالی نقصان سے دوچار کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ مصراتہ شہر میں حکومت نواز ملیشیائوں کے ٹھکانوں پر بڑے پیمانے پرفضائی حملے کیے گئے جن میں اسلحہ کے گودام تباہ کردیے گئے ہیں۔

لیبیا چینل کے 'ٹویٹر' اکائونٹ پرجاری ایک خبر میں بتایا گیا ہے کہ قومی فوج نے زلیتن میں مجر کیمپ میں الوفاق بریگیڈ کے ایک مرکز پر بمباری کی گئی ہے۔

درایں اثناء فوج کے سینیر عہدیدار میجر جنرل خالد المحجوب نے کہا ہے کہ لیبیا میں جنگ مزید شدت اختیار کرگئی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ طرابلس میں صلاح الدین کے مقام پر قومی فوج اور قومی وفاق حکومت کے درمیان گھمسان کی لڑائی جاری ہے جس میں قومی وفاق کی حمایت یافتہ ملیشیا کو پسپائی کا سامنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں