.

اطالوی سُپرکپ کا میچ،سعودی عرب کا ’تاریخی گول‘ خواتین کی مردوں کے ساتھ نشستیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں آج نئی تاریخ رقم ہوگئی ہے اور مملکت کی تاریخ میں پہلی مرتبہ ایک اسٹیڈیم میں خواتین کو مردوں کے ساتھ بیٹھ کر اطالوی سپر کپ کا فٹ بال میچ دیکھنے کی اجازت دی گئی ہے۔سعودی ویژن 2030ء کے تحت گذشتہ سال پہلی مرتبہ خواتین کو اسٹیڈیم میں جا کر فٹ بال میچ دیکھنے کی اجازت دی گئی تھی۔

اٹلی کے سپر کپ کا فائنل میچ اتوار کی شب سعودی دارالحکومت الریاض میں جامعہ شاہ سعود کے اسٹیڈیم میں کھیلا جارہا ہے اور اس میں پہلی مرتبہ خواتین کو بھی مرد شائقین کے ساتھ ساتھ بیٹھنے کی اجازت دی گئی ہے۔ یہ میچ اطالوی سپر لیگ کے دو فٹ بال کلبوں جووینتس اور لازیو کے درمیان کھیلا جارہا ہے اور پاکستان کے معیاری وقت کے مطابق یہ رات پونے دس بجے شروع ہورہا ہے۔

گذشتہ سال سُپر کپ کا ایک میچ ساحلی شہر جدہ میں کھیلا گیا تھا لیکن تب سعودی خواتین کو پہلی مرتبہ اسٹیڈیم میں جا کر میچ دیکھنے کی تو اجازت دی گئی تھی لیکن ان کے لیے مردوں سے الگ نشستیں مخصوص کی گئی تھیں اور وہ اپنے کسی مرد رشتہ دار ہی کے ساتھ میچ دیکھ سکتی تھیں۔

اٹلی کی سپرلیگ ’سیریز اے‘ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ( سی ای او) لیوگی ڈی سیرو کا کہنا ہے کہ ’’فٹ بال کا ایک اہم کردار ہے۔یہ رکاوٹوں کو توڑ سکتا ہے اور مختلف تہذیبوں کو قریب لا سکتا ہے۔ہم اس سے بہت ہی مطمئن ہیں کہ (سعودی عرب میں) اب خواتین بھی میچ سیکھ سکتی ہیں اور جہاں چاہیں بیٹھ سکتی ہیں۔یہ مساوی درجہ کے حصول کی جانب ایک اہم قدم ہے۔یہ اس حقیقت کا بھی مظہرہے کہ فٹ بال معاشرے کے بنیادی پہلوؤں کی تبدیلی میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے۔‘‘انھوں نے یہ گفتگو اٹلی سے الریاض کے لیے روانہ ہوتے وقت کی تھی۔

ادھر اٹلی میں فٹ بال کے بعض شائقین کا کہناہے کہ ملک سے باہر سپرکپ کے میچ کا انعقاد بہ ذات خود روایت شکن ہے۔روم میں ایک کیفے میں بیٹھے ایمل کئیر وینٹیلی ٹوسٹی نامی ایک اطالوی شہری کا کہنا تھا کہ ’’قبل ازیں ہم اتوار کو گرجا گھر جانے کے عادی تھے۔اس کے بعد دوپہر کا کھانا کھاتے اور پھر میچ دیکھنے کے لیے جاتے تھے۔یہ ہمارا اتوار کا معمول اور عادت تھی لیکن اب ایسا نہیں رہا ہے۔‘‘

اٹلی کی سپر لیگ کے اس میچ کا فاتح کون سی ٹیم رہتی ہے،اس سے قطع نظر اگر پالیسی کے نقطہ نظر سے بات کی جائے تو ویژن 2030ء نے یقینی طور پر ’تاریخی گول‘ کر لیا ہے۔