.

نیجر میں 'داعش' کی معاونت کے الزام میں دو ترک باشندے گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افریقی ملک نیجرکی پولیس نے دو ترک باشندوں سمیت تین غیرملکیوں کو حراست میں لیا ہے۔ ان پر دہشت گرد تنظیم'داعش' کی مالی معاونت کا الزام عاید کیا گیا ہے۔ ملزمان میں ایک مقامی سہولت کار بھی شامل ہے جو 'داعش' کے دہشت گردوں کی مدد میں غیرملکیوں کی مدد کررہا تھا۔

ان غیرملکیوں کی گرفتاری اس وقت عمل میں لائی گئی جب سیکیورٹی حکام کی طرف سے ملک میں داخل ہونے والے مشتبہ دہشت گردوں کی پاسپورٹس پرموجود تصاویر اور اشتہار آویزاں کرکے ان کی گرفتاری میں معاونت کی اپیل کی گئی تھی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ دارالحکومت نیامی میں داخل ہونے والے ان مشتبہ اور خطرناک دہشت گردوں کی تلاش جاری ہے۔

نیجر کے ایک سیکیورٹی ذریعے نے بتایا کہ ترک ایئرلائن کے ذریعے نیجر میں داخل ہونے والے دہشت گردوں کی نشاندہی کرلی گئی ہے۔ استنبول سے آنے والے دہشت گردوں پر صحرائے کبیر میں سرگرم 'داعش' کی مالی مدد کا شبہ ظاہر کیا جاتا ہے۔

خیال رہے کہ مغربی نیجرمیں 12 دسمبر کو ایک فوجی اڈے پر'داعش' نے خونی حملہ کرکے 71 فوجیوں کو ہلاک اور سیکڑوں کو زخمی کردیا تھا۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ گرفتار ترک شہریوں پر افریقی ملکوں میں 'داعش' کو لاجسٹک سہولیات فراہم کرنے، دہشت گردوں کو اسلحہ کی سپلائی، لیبیا اور افریقی ساحلی علاقوں میں عسکریت پسندوں کی مالی مدد کرنے کا شبہ ظاہر کیا جاتا ہے۔