.

قازقستان میں مسافر طیارہ گر کر تباہ ، 14 افراد ہلاک اور متعدد سخت زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قازقستان کے شہر آلماتے میں مقامی ہوائی اڈے کے حکام کے مطابق جمعے کی صبح ایک مسافر طیارہ حادثے کا شکار ہو گیا۔ حکام نے واضح کیا کہ گرنے والے طیارے میں 100 مسافر سوار تھے۔ حادثے میں درجنوں افراد کی زندگی بچ گئی جب کہ ہنگامی حالات سے نمٹنے والے ادارے جائے حادثہ پر کام کر رہے ہیں۔

سوشل میڈیا پر وائرل وڈیو کلپس میں جائے حادثہ کو دکھایا گیا ہے۔ کلپس میں جہاز کے کچھ ملبے کے علاوہ امدادی ٹیمیں بچ جانے والے مسافروں کو تلاش کرتی ہوئی نظر آ رہی ہیں۔

مقامی میڈیا پر نشر ہونے والی تصاویر کے مطابق حادثے کے نتیجے میں مسافر طیارہ دو حصوں میں تقسیم ہو گیا۔

شہری ہوابازی کے حکام نے اعلان کیا ہے کہ اس الم ناک حادثے کے نتیجے میں کم از کم 14 افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ فضائی کمپنی "بیک ایئر" کے اس جہاز میں 95 مسافر اور عملے کے 5 ارکان سوار تھے۔

یہ طیارہ آلماتے شہر سے دارالحکومت نور سلطان جا رہا تھا۔ تاہم اڑان بھرنے کے دوران ہی طیارے کا توازن بگڑ گیا اور تھوڑی دیر بعد ہی وہ نیچے آتے ہوئے ایک چھوٹی عمارت سے ٹکرا گیا۔ حکام نے المیرک گاؤں میں طیارے کے گرنے کے مقام کا گھیراؤ کر لیا۔ یہ گاؤں آلماتے ہوائی اڈے کے رن وے کے فورا بعد واقع ہے۔

متعلقہ حکام کا کہنا ہے کہ ابتدائی رپورٹ کے مطابق حادثے کی وجہ کپتان کی غلطی یا پھر کوئی تکنیکی خرابی ہو سکتی ہے۔

آلماتے میں شہری حکومت کا کہنا ہے کہ حادثے کے مقام سے 14 لاشیں ملی ہیں جب کہ 17 افراد ہسپتال میں زیر علاج ہیں ، ان کی حالت تشویش ناک ہے۔ اس کے علاوہ طیارے میں سوار 8 بچوں کو نفسیاتی دھچکا پہنچا ، ان بچوں کو مطلوبہ علاج فراہم کیا جا رہا ہے۔

آلماتے ہوائی اڈے کے فیس بک پیج پر کم از کم 60 افراد کے نام جاری کیے گئے ہیں جو اس حادثے میں زندہ بچ گئے۔

دوسری جانب قازقستان کے صدر قاسم جومارت توکائیوو نے اپنی ایک ٹویٹ میں باور کرایا ہے کہ حادثے کے ذمے دار افراد کو قانون کے مطابق سخت سزا دی جائے گی۔ صدر نے مرنے والوں کے اہل خانہ سے تعزیت کا اظہار بھی کیا۔