امریکی پابندیوں سے ایران کو 2 کھرب ڈالرکا نقصان ہوا: حسن روحانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایرانی صدر حسن روحانی نے امریکا کی طرف سے عاید کردہ اقتصادی پابندیوں کے تباہ کن اثرات کا اعتراف کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی پابندیوں اور پچھلے دو سالوں میں تیل اور ہارڈ کرنسی کی کمی کے باعث تہران کو 200 ارب ڈالر کا نقصان ہوا ہے۔

ایرانی "آئی ایس این اے" (ایسنا) نیوز ایجنسی کے مطابق روحانی نے منگل کے روز ایک تقریر میں کہا کہ اس رقم میں تیل کی فروخت کے ساتھ ساتھ بیرونی کریڈٹ میں 100 ارب ڈالرکی رقم بھی شامل ہے۔

روحانی نے پابندیوں کے اثرات اور انتہائی امریکی دباؤ کی پالیسی کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ "فی الحال ہم بدترین قسم کی پابندیوں کا سامنا کر رہے ہیں۔ خوراک اور پانی زندگی کی بنیادی ضروریات ہیں اور کے بغیر کوئی زندہ نہیں رہ سکتا چاہے وہ کتنا ہی مضبوط اور طاقتور کیوں نہ ہو"۔

پیر کے روز ایرانی صدر نے اپنے انتخابی وعدوں کو پورا کرنے میں اپنی ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے اس کا یہ جواز پیش کیا تھا کہ جب میں نے عوام سے وعدے کیے تھے اس وقت امن تھا اور آج ملک حالت جنگ میں ہے۔

صدر روحانی کا کہنا تھا کہ جو لوگ حکومت پر تنقید کرتے ہیں وہ جانتے ہیں کہ ہمارے موجودہ حالات 3 سال پہلے کی طرح نہیں ہیں۔ ہم اس وقت لڑائی کی حالت میں ہیں۔

روحانی نے ٹوکیو کے اپنے حالیہ دورے کے دوران تہران کی واشنگٹن کے ساتھ مذاکرات کے لیے آمادگی کا اظہار کیا تھا لیکن انہوں نے پابندیاں ختم کرنے پر اصرار کیا جبکہ ایرانی سپریم لیڈر علی خامنہ ای نے امریکا کے ساتھ کسی بھی مذاکرات کی مخالفت کی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں