.

ترکی کی جارحیت کے خلاف لیبی فوج اور عوام متحد ہیں: المسماری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کی قومی فوج کے ترجمان میجر جنرل احمد المسماری نے کہا ہے کہ فوج اور عوام ترکی کی لیبیا پر یلغار کا مقابلہ کرنے کے لیے پوری طرح تیارہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم ترکی کی لیبیا پر جارحیت کا مقابلہ کرنے کےلیے 'اعلان جہاد' کرتے ہیں۔

ہفتے کی شام ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے میجر جنرل المسماری کا کہنا تھا کہ لیبیا میں لڑائی اب روایتی جنگ نہیں رہا ہے کیونکہ یہ ان ملیشیائوں کے خلاف جنگ ہے جو ترکی جیسے ممالک کی حمایت سے لڑ رہے ہیں۔

المسماری نے کہا کہ لیبیا کے عوامی طبقات کی طرف سے واضح پیغامات ملے ہیں کہ عوام فوج کی پشت پر کھڑی ہے۔ عوام تمام محاذوں پر قومی فوج کی مدد کرے گی۔ آج ہمیں باہر سے ترکی کی ننگی جارحیت کا سامنا ہے اور ہم اس جارحیت کا ہرسطح پر مقابلہ کرنے کے لیے تیار ہیں۔ ہم اس جنگ میں ترکی کو شکست دے کر اس کی حمایت یافتہ ملیشیائوں کو کیفر کردار تک پہنچائیں گے۔ان کا کہنا تھا کہ پورے لیبیا میں نیشنل آرمی کی تشکیل نو کی جا رہی ہے تاکہ ہم منظم انداز میں اپنے مشن کو آگے جاری رکھیں۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس جنگ کی پوری تیاری ہے۔ ہماری بحریہ تیار ہے اور ملک کے ساحل پر اپنا کنٹرول نافذ کرنے اور ان کو محفوظ بنانے کے ساتھ ساتھ فضائی اڈوں پر کنٹرول کے ہمارے پاس جدید دفاعی وسائل بھی موجود ہیں۔ دنیا نے دیکھا کہ ہے کہ ہم ترکی کے طیاروں کو کس طرح گرا رہےہیں۔

جنرل المسماری نے میدان جنگ کی صورت حال پربات کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت ہماری توجہ طرابلس میں اہم مقامات کا کنٹرول حاصل کرنے پر مرکوز ہے۔قومی فوج تیزی کے ساتھ زبردست پیش قدمی کررہی ہے۔ قومی وفاق کی وفادار ملیشیا کو ترکی کی مدد کے باوجود پسپائی کا سامنا ہے