.

کرونا وائرس: یواے ای کی 5 فروری سے بیجنگ کے سوا چین کے لیے تمام پروازیں معطل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات نے چین میں مہلک کرونا وائرس پھیلنے کے بعد بیجنگ کے سوا دوسرے شہروں کے لیے اپنی تمام پروازیں بدھ پانچ فروری سے معطل کرنے کا اعلان کیا ہے۔

چین میں نئے وائرس کرونا کے پھیلنے کے بعد سے اب تک 362 اموات ہوچکی ہیں اور 17300 سے زیادہ افراد متاثر ہوئے ہیں۔ جنوری کے اوائل میں یہ وائرس چین کے شہر ووہان میں پہلے پہل جنگلی جانوروں سے پھیلا تھا اور پھر اس نے وبائی شکل اختیار کرلی ہے۔

متحدہ عرب امارات میں اب تک کرونا وائرس سے متاثرہ پانچ کیسوں کی تصدیق ہوئی ہے۔ یہ تمام چینی سیاح ہیں اور ووہان شہر سے تعلق رکھتے ہیں۔

یواے ای کی وزارت صحت نے اس مہلک وائرس سے بچاؤ کے لیے شہریوں کو احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کا مشورہ دیا ہے اور انھیں ہدایت کی ہے کہ وہ روایتی عرب معانقے کے وقت ناک سے ناک ملانے سے گریز کریں تاکہ اس طرح اس مہلک وائرس کا شکار ہونے سے بچا جاسکے۔

واضح رہے کہ کئی ایک ممالک کی فضائی کمپنیوں نے پہلے ہی چین کے لیے اپنی پروازیں معطل کردی ہیں۔ان میں مصر اور برطانیہ کی قومی فضائی کمپنیاں بھی شامل ہیں۔البتہ پاکستان نے سوموار سے چین کے لیے پروازیں بحال کرنے کا اعلان کیا ہے اور چین میں پھنسے ہوئے پاکستانی شہریوں اور طلبہ کو خصوصی پروازوں کے ذریعے اسلام آباد لایا جارہا ہے مگر ان میں ووہان شہر میں مقیم پاکستانی یا چینی شہری شامل نہیں ہوں گے۔

برٹش ائیرویز نے گذشتہ جمعرات کو چین میں کرونا وائرس پھیلنے کے بعد اپنی تمام پروازیں ایک ماہ کے لیے منسوخ کرنے کا اعلان کیا تھا۔تاہم برٹش ائیرویز کی خاتون ترجمان کے مطابق ہانگ کانگ کے لیے برٹش ائیرویز کی پروازیں معمول کے مطابق جاری رہیں گی۔