چین میں‌ کرونا وائرس سے 722 افراد لقمہ اجل بن چکے: وزارت صحت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چین کی صوبہ ہوبی کی صحت کمیٹی نے ہفتے کو کو اپنی ویب سائٹ پر ایک بیان میں اعلان کیا ہے کہ کرونا وائرس کے پھیلنے کے نتیجے میں ملک کے وسطی خطے میں ہلاکتوں کی تعداد 86 تک جا پہنچی ہے جب کہ جمعہ کی شام تک مجموعی طور پر 722 افراد اس مہلک وائرس کی بھینٹ چڑھ چکے ہیں۔

کرونا پھیلنے کے مرکزی علاقے ھوبی میں مزید 3399 کیسز سامنے آئے ہیں جس کے بعد اس وائرس کے متاثرین کی تعداد بڑھ کر 31 ہزار 774 ہوچکی ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے ڈائریکٹر جنرل، ٹیڈروس اذانم گبریوس نے اعلان کیا ہے کہ دنیا کو کرونا وائرس کے پھیلاؤ سے نمٹنے کے لئے کپڑوں، ماسک، دستانے اور دیگر حفاظتی آلات کی کمی کا سامنا ہے۔

جینیسوس نے جنیوا میں ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ دنیا کو انفرادی حفاظتی آلات کی شدید قلت کا سامنا ہے۔ انہوں‌ نے کہا کہ مینوفیکچررز اور تقسیم کاروں سے بات کی گئی ہے تاکہ وہ کرونا سے بچائو کے لیے آلات کی جلد اور زیادہ پیداوار کو یقینی بنائیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ پچھلے دو دنوں میں چین میں انفیکشن کے کم واقعات کی اطلاع ملی ہے اور یہ ایک خوشخبری ہے لیکن ہم اس کی روک تھام کے لیے مزید اقدامات کی توقع رکھتے ہیں۔ان کی طرف سے ورلڈ ہیلتھ ایمرجنسی پروگرام کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر مائیکل ریان نے کہا کہ ہم نے کروناکی ممکنہ انفیکشن کی تشخیص کے لیے 250,000 ٹیسٹ بھیجے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اس وائرس کے بارے میں جان بوجھ کر غلط معلومات بھی پھیلائی جا رہی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں