سعودی عرب: امریکا اور افغان طالبان کے درمیان امن سمجھوتے کا خیرمقدم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب نے امریکا اور افغان طالبان کے درمیان ہفتے کے روز طے پانے والے امن سمجھوتے کا خیرمقدم کیا ہے اور اس امید کا اظہار کیا ہے کہ اس سے جنگ زدہ افغانستان میں جامع اور مستقل جنگ بندی کی راہ ہموار ہو گی۔

سعودی عرب کی وزارتِ خارجہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’یہ سمجھوتاافغانستان میں امن واستحکام کی بحالی کے لیے اہم کردار کردار ادا کرے گا اور اس سے افغان شہریوں کو اپنے ملک کی ترقی میں کردار ادا کرنے میں مدد ملے گی۔‘‘

Advertisement

امریکا اور طالبان کے درمیان قطر کے دارالحکومت دوحہ میں افغانستان سے غیرملکی فوجیوں کے انخلا اور گذشتہ اٹھارہ سال سے جاری جنگ کے خاتمے کے لیے یہ تاریخی سمجھوتا طے پایا ہے۔ دونوں فریقوں کے نمایندوں نے دوحہ میں منعقدہ ایک تاریخی تقریب میں اس سمجھوتے پر دست خط کیے ہیں۔

اس سمجھوتے کے تحت امریکا افغانستان میں تعینات اپنے آٹھ ہزار چھے سو فوجیوں کو 135 روز میں واپس بلا لے گا۔ افغانستان میں اس وقت تیرہ ہزار امریکی فوجی تعینات ہیں۔

امریکا اور نیٹو کے افغانستان میں باقی رہ جانے والے قریباً ساڑھے چار ہزار فوجیوں کے انخلا کا انحصار طالبان کی جانب سے انسداد دہشت گردی سے متعلق شرائط پر عمل درآمد پر ہوگا۔امریکا زمینی صورت حال کا جائزہ لے گا اور پھر ان فوجیوں کو بھی چودہ ماہ میں واپس بلا لے گا۔

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے بھی طالبان اور امریکا کے درمیان اس امن سمجھوتے کا خیرمقدم کیا ہے۔انھوں نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ یہ سمجھوتا افغانستان میں امن اور مفاہمتی عمل کا آغاز ہے۔

انھوں نے لکھا کہ پاکستان نے ہمیشہ افغانستان میں قیام امن کے لیے مذاکرات اور افغان مسئلہ کے سیاسی حل پرزوردیا ہے۔

انھوں نے ایک اور ٹویٹ میں کہا ہے کہ تمام متعلقہ فریق اب اس تاریخی سمجھوتے کوضائع ہونے سے بچائیں۔میری دعائیں افغان عوام کے ساتھ ہیں،جنھوں نے گذشتہ چار دہائیاں خونریزی کے ماحول میں گزاری ہیں۔ان کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان افغانستان میں امن کے لیے اپنا کردار ادا کرتا رہے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں