.

امریکی ارب پتی مائیکل بلومبرگ حریف جوبائیڈن کے حق میں صدارتی دوڑ سے دستبردار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا کے میڈیا ٹائیکون مائیکل بلومبرگ نے ڈیموکریٹک پارٹی کی طرف سے صدارتی امیدوار کی حیثیت سے نامزدگی کی دوڑ سے باہر ہو گئے ہیں۔انھوں نے سپر منگل کے موقع پر ووٹروں کی جانب سے بے رُخی ملاحظہ کرنے کے بعد سابق نائب صدر جوزف بائیڈن کے حق میں دستبردار ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔

جو بائیڈن اس وقت صدارتی نامزدگی کے لیے ڈیمو کریٹک پارٹی کی پرائمری دوڑ میں نمایاں کھلاڑی کی حیثیت سے ابھر رہے ہیں۔ قبل ازیں وہ نامزدگی کی اس دوڑ میں مائیکل بلومبرگ سے بھی پیچھے تھے۔

مائیکل بلومبرگ نے بدھ کو ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ تین ماہ قبل ، میں ڈونلڈ ٹرمپ کو شکست دینے کی نیّت سے صدارتی انتخاب کی دوڑ میں شریک ہواتھا۔آج میں اسی بنا پر اس دوڑ سے دستبردار ہورہا ہوں۔یعنی ڈونلڈ ٹرمپ کو شکست دینے کے لیے۔ کیونکہ مجھ پر یہ واضح ہوچکا ہے کہ اگر میں اس دوڑ میں شامل رہتا ہوں تو اس مقصد کا حصول زیادہ مشکل ہوجائے گا۔‘‘

نیویارک کے سابق ارب پتی میئرنے صدارتی انتخاب کی اس ابتدائی دوڑ پر کروڑوں ڈالر خرچ کیے ہیں لیکن وہ سپر ٹیوز ڈے (منگل) کو امریکا کی چودہ ریاستوں میں سے کسی ایک میں بھی نامزدگی حاصل کرنے میں ناکام رہے ہیں۔گذشتہ کل کا دن ڈیمو کریٹک پارٹی کے پرائمری سیزن میں بڑی اہیمت کا حامل تھا۔