شام میں ترک فوجیوں کی ہلاکت پر افسوس ہے: پوتین کی ایردوآن سے تعزیت

ہماری فوج نے غلطی سے ترک فوجی قتل کیے:پوتین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام کے صوبہ ادلب میں گذشتہ ماہ ہونے والی لڑائی کے دوران روسی اور شامی فوج کے حملوں میں درجنوں ترک فوجیوں کی ہلاکتوں پر روسی صدر ولادی میر پوتین نے اپنے ترک ہم منصب رجب طیب ایردوآن سے تعزیت کی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ترک صدر نے روس کے حالیہ دورے کے دوران ماسکو میں روسی صدر سے ملاقات کی۔

اس موقع پر صدر پوتین نے کہا کہ ہم مانتے ہیں کہ شام میں ہماری فوج کی وجہ سے غلطی سے ترک فوجیوں کی اموات ہوئی ہیں۔ یہ ایک بہت بڑا المیہ تھا۔ ترک فوج نے اپنے ٹھکانوں کے بارے میں روسی اور شامی فوج کو آگاہ نہیں کیا تھا۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ ترکی کے جوابی حملوں میں شامی فوج کا بھی بھاری نقصان ہوا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق پوتین اور ایردوآن کے مابین دو طرفہ ملاقات دو گھنٹے چالیس منٹ تک جاری رہی۔ اس کے بعد ادلب سے متعلق روسی اور ترک وفود نے بھی ملاقات کی۔

روس اور ترکی کے سربراہ اجلاس نے شمال مغربی شام میں کشیدگی پر بات چیت کی۔ یہ ملاقات ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب دوسری طرف ماسکو، شام کے سمندری علاقوں کی حدود میں بڑی فوجی کمک لگانے پر زور دے رہا ہے۔

اپنے ترک ہم منصب سے ملاقات کے آغاز میں روسی صدر نے کہا کہ ادلب کی صورتحال ایک ایسے موڑ پر داخل ہو چکی ہے جس میں ہمارے درمیان براہ راست گفتگو کی ضرورت ہے۔

اس پر ترک صدر نے کہا کہ ادلب کی نازک صورت حال کو سمجھتے ہیں۔ اس لیے براہ راست بات چیت کے لیے تیار ہیں۔ دونوں رہ نمائوں کی ون آن ون ملاقات کے بعد دونوں ملکوں کے وفود بھی شامل ہوگئے۔

اس موقع پر ترک صدر طیب ایردوآن نے ادلب میں امن وامان کی صورت حال کی بہتری کی امید ظاہر کی۔ انہوں نے کہا کہ ترکی اور روس کے تعلقات اپنے عروج پر ہیں اور ہم چاہیں گے کہ یہ مزید مستحکم ہوں۔

خیال رہے کہ ترکی اور روسی صدر نے ایک ایسے وقت میں ملاقات کی ہے جب دونوں ملکوں کی افواج شام میں ادلب میں ایک دوسرے کے آمنے سامنے کھڑی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں