کرونا وائرس کے باعث امریکا میں تاجر کاروباری اوقات کم کرنے پرمجبور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکا میں کرونا وائرس کے پھیلتے خوف کے باعث جہاں دکانوں پر بنیادی ضرورت بالخصوص خوراک کے سامان کے خریداروں کا ھجوم دیکھا جا رہا ہے ہیں وہیں ملک میں کاروباری مراکز اپنے اوقات کار کم کرنے پرمجبور ہوگئے ہیں۔

امریکی کمپنی 'دی ہل' کی جانب سےجاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکا کے مشہور سپور اسٹور چین وال مارٹ نے اعلان کیا ہے کہ کل اتوار سے اپنی تمام برانچوں میں کرونا وائرس کے خدشے کے پیش نظر اوقات کار کم کردیے ہیں۔

کل سے وال مارٹ اسٹورز صبح 6 بجے سے رات 11 بجے تک کھلے رہیں گے۔ اور جو اسٹورز پہلے کم وقت کام کررہے ہیں وہ اسی طرح کام کرتے رہیں گے۔

پرچون اسٹور اور کورونا بوجھ

'دی ہل' کمپنی نے ایک بیان میں کہا ہے کاروباری مراکز میں اوقات کار میں کمی سے اس بات کو یقینی بنانے میں مدد ملے گی کہ صارفین اپنی ضرورت کی مصنوعات ذخیرہ کے قابل ہوں گے۔ اس کے علاوہ ان اسٹوروں پر صفائی اور وائرس کش اسپرے کا بھی وقت ملے گا۔

یہ خبر ان ملازمین کے لیے پریشانی کا باعث بن سکتی جو مستقل ملازمت کےبجائے فی گھنٹہ کے حساب سے کمپنی کے ساتھ کام کرتے ہیں۔ انہیں کسی قسم کی ہیلتھ انشورینس کی سہولت بھی میسر نہیں۔وہ اپنی اپنی شفٹ میں کام کرتے ہیں۔ اگر رات کی شفٹ بند ہوتی ہے تو ایسے تمام افراد کو گھںٹوں پرکام کرتے ہیں بے روزگار ہوسکتے ہیں۔

حال ہی میں وال پارٹ نے کرونا کاشکارہونے والے اپنے کل وقتی اور پارٹ ٹائم ملازمین کےلیے تنخواہ کے ساتھ 26 ہفتوں کی تعطیل کا اعلان کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں