.

سعودی عرب میں کرونا وائرس کے کیسوں کی تعداد دو لاکھ تک پہنچ سکتی ہے: وزیرصحت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے وزیر صحت توفیق الربیعہ نے کہا ہے کہ مملکت میں آیندہ چند ہفتوں کے دوران میں کرونا وائرس کے کیسوں کی تعداد بڑھ کر ایک لاکھ سے دو لاکھ تک ہوسکتی ہے۔

سعودی خبررساں ایجنسی (ایس پی اے) کے مطابق ڈاکٹر توفیق الربیعہ نے کہا ہے:’’اس میں کوئی شک نہیں کہ ہدایات اور طریق کار کی پاسداری کی وجہ سے کرونا وائرس کے کیسوں کی تعداد کو کم سے کم رکھنے میں مدد ملی ہے جبکہ ان ہدایات پر عمل درآمد نہ کرنے کی صورت میں کیسوں کی تعداد میں بہت زیادہ اضافہ ہوسکتا ہے۔‘‘

سعودی وزارت صحت نے منگل کے روز کرونا وائرس کے 41 نئے کیسوں کی تصدیق کی ہے جس کے بعد اس مہلک وائرس کا شکار ہونےوالے افراد کی تعداد 2795 ہوگئی ہے۔

سعودی حکومت نے اس مہلک وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے سوموار کو دارالحکومت الریاض سمیت متعدد شہروں میں 24 گھنٹے کا کرفیو نافذ کردیا ہے۔

سعودی وزارت داخلہ کے مطابق پانچ شہروں الریاض،تبوک ، الدمام ، ظہران ، الہفوف کے علاوہ چار گورنریوں جدہ ، طائف ، القطیف اور الخُبر میں دن رات کا کرفیو اور لاک ڈاؤن نافذ کیا گیا ہے۔

سعودی حکومت نے قبل ازیں گذشتہ جمعرات کو مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں تاحکم ثانی 24 گھنٹے کا کرفیو نافذ کردیا تھا۔سعودی وزارت داخلہ کے مطابق ان شہروں کے مکین کرفیو کے دوران میں اپنے گھروں اور اقامت گاہوں ہی میں رہیں گے اور صرف صبح چھے بجے سے سہ پہر تین بجے تک سوداسلف ، خوراک کی اشیاء اور ادویہ کی خریداری کے لیے گھروں سے باہر نکل سکتے ہیں مگر انھیں اشیائے ضروریہ کی خریداری کے لیے بھی اپنے اپنے علاقوں تک محدود رہناچاہیے۔

وزارت داخلہ کے مطابق مذکورہ شہروں میں تمام تجارتی سرگرمیاں معطل کردی گئی ہیں اور صرف دواخانے اور گراسری اسٹور ہی کھلے رکھنے کی اجازت ہوگی۔