.

سعودی عرب:کرونا وائرس،بین الاقوامی پروازیں اور پبلک ٹرانسپورٹ بدستورمعطل رکھنے کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب نے کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے بین الاقوامی اور اندرون ملک پروازیں بدستور معطل رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔البتہ ہنگامی بنیاد پر پروازوں کی آمد ورفت اس فیصلے سے مستثنا ہوگی۔

سعودی وزارت داخلہ کے ترجمان نے اتوار کو ایک نشری نیوز کانفرنس میں بتایا ہے کہ ملک میں ٹرین ، بس اور ٹیکسی سروس بدستور معطل رہے گی اور سرکاری ملازمین اپنے گھروں ہی سے کام جاری رکھیں گے۔

سعودی حکومت نے ملک بھر کے مختلف شہروں اور صوبوں میں کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے نافذ کرفیو میں نرمی کا بھی اعلان کیا ہے۔البتہ مکہ مکرمہ میں نافذ کرفیو میں نرمی نہیں کی گئی ہے۔

سعودی پریس ایجنسی کے مطابق رمضان المبارک میں صبح نو بجے سے شام پانچ بجے تک کرفیو میں نرمی کی گئی ہے۔13 مئی تک مملکت بھر میں پرچون فروشوں کو اپنی دکانیں کھولنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

لیکن مکہ مکرمہ اور بعض دوسرے علاقوں میں 24 گھنٹے کا لاک ڈاؤن جاری رہے گا۔مکہ میں حالیہ دنوں میں لاک ڈاؤن کے باوجود کرونا وائرس کے سب سے زیادہ کیس رپورٹ ہوئے ہیں حالانکہ سعودی حکومت نے گذشتہ ماہ اس مہلک وَبا کو پھیلنے سے روکنے کے لیے عمرے کی ادائی پر بھی پابندی عاید کردی تھی۔

مشرقِ اوسط اور شمالی افریقا(مینا) کے خطے میں واقع دوسرے بہت سے ممالک نے بھی رمضان المبارک کے آغاز کے بعد لاک ڈاؤن اور کرفیو میں اسی طرح کی نرمیوں کے اعلانات کیے ہیں تاکہ مسلمان ماہِ صیام کو اچھے طریقے سے گزار سکیں۔

سعودی عرب میں گذشتہ 24 گھنٹے میں کرونا وائرس کے سب سے زیادہ 1223 کیس ریکارڈ کیے گئے ہیں اور ملک میں اب اس مہلک وَبا کا شکار افراد کی تعداد 17522 ہوگئی ہے ۔اس مہلک وائرس کا شکار 139 افراد وفات پا چکے ہیں۔