.

افغانستان میں داعش تنظیم کے تین علاقائی لیڈردارالحکومت کابل سے گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افغان سکیورٹی فورسز نے جنوبی ایشیا میں داعش تنظیم کے تین سینیر لیڈروں کو گرفتار کر لیا ہے، ان میں گروپ کا علاقائی قائد بھی شامل ہے۔

افغانستان کی وزارت داخلہ اور خفیہ ایجنسی نظامت عامہ برائے قومی سلامتی ( این ڈی ایس) نے سوموار کو ایک بیان میں کہا ہے کہ جنوبی ایشیا میں داعش کے سربراہ ابو عمر خراسانی کو اس گروپ کے شعبہ جاسوسی کے سربراہ اور افسرتعلقات عامہ کے ساتھ دارالحکومت کابل سے گرفتار کر لیا گیا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ این ڈی ایس علاقائی دہشت گرد گروپوں کے سینیر لیڈروں کا سراغ لگانے کے لیے جامع اہدافی کارروائیاں جاری رکھے گی اور ان دہشت گرد گروپوں کے مشترکہ ٹھکانوں کو تباہ کردیا جائے گا۔

جنوبی ایشیا میں داعش نامی تنظیم افغانستان کے شمالی علاقوں میں موجود ہے لیکن اس نے ملک کے جنوب میں بھی حالیہ مہینوں میں بڑے حملے کیے ہیں اور کابل میں اقلیتی گروپوں پر تباہ کن حملوں کی ذمے داری قبول کرنے کا دعویٰ کیا تھا۔

افغان سکیورٹی فورسز نے گذشتہ بدھ کو داعش اور حقانی نیٹ ورک سے تعلق رکھنے والے آٹھ جنگجوؤں کو گرفتار کیا تھا۔ان پرکابل میں سکھ عبادت گزاروں پر حملوں میں ملوث ہونے کا الزام عاید کیا گیا ہے۔