.

عرب اتحاد نے یمنی حوثیوں کا سعودی شہر نجران کی جانب چھوڑا گیا ڈرون مار گرایا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عرب اتحاد نے سعودی عرب کے جنوبی شہر نجران کی جانب یمن سے حوثی شیعہ باغیوں کا چھوڑا گیا ایک ڈرون مارگرایا ہے۔

سعودی عرب کی قیادت میں عرب اتحاد کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے بدھ کو ایک بیان میں کہا ہے کہ حوثی ملیشیا نے بین الاقوامی انسانی قانون کی خلاف ورزیاں جاری رکھی ہوئی ہیں اور وہ جان بوجھ کر شہری آبادیوں کو نشانہ بنا رہی ہے جس سے سیکڑوں شہریوں کی زندگیاں خطرے سے دوچار ہوگئی ہیں۔

سعودی پریس ایجنسی کے مطابق کرنل ترکی المالکی نے کہا ہے کہ ’’ڈرونز کے ذریعے دہشت گردی کی یہ کارروائیاں بین الاقوامی انسانی قانون کی ننگی خلاف ورزی ہیں اور یمن میں 29 اپریل سے جاری جنگ بندی کی بھی خلاف ورزی ہیں۔

حوثی ملیشیا نے فوری طور پر اس ڈرون حملے کے بارے میں کوئی بیان جاری نہیں کیا ہے۔ترجمان کا کہنا تھا کہ حوثیوں نے عرب اتحاد کے اعلانِ جنگ بندی کے بعد سے اب تک اس کی 4455 مرتبہ خلاف ورزیاں کی ہیں۔

عرب اتحاد نے 29 اپریل کو یمن میں دو ہفتے کے لیے مکمل جنگ بندی کا اعلان کیا تھا تاکہ کرونا وائرس کو ملک میں پھیلنے سے روکا جاسکے۔پہلے یہ جنگ بندی دو ہفتے کے لیے ہوئی تھی اور پھر اس میں غیر معینہ مدت کے لیے توسیع کردی گئی تھی۔