.

وائٹ ہائوس کی ٹرمپ کی چرچ آمد پر فائرنگ کی خبروں کی تردید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

وائٹ ہائوس نے ایک بیان میں واضح کیا ہے کہ امریکی قانون تمام شہریوں کو پرامن احتجاج کا مکمل حق دیتا ہے مگر احتجاج کی آڑ میں کسی کو تخریب کاری اور لوٹ مار کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔

وائٹ ہائوس کی ترجمان نے ایک بیان میں کہا کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے چرچ کے دورے کے دوران کسی قسم کی فائرنگ یا آنسوگیس کی شیلنگ نہیں کی گئی۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ ایک سیاہ فام شہری کو غیرقانونی طریقے سے قتل کیا گیا ہے۔ اس واقعے کی ٹھوس تحقیقات ہوں گی اور اس میں ملوث افراد کے خلاف قانون کے مطابق سخت کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

درایں اثنا امریکی صدر ڈونلد ٹرمپ ایک بیان میں کہا ہے کہ انہوں نے چرچ جانے سے قبل وہاں سے لوگوں کو باہر نکالنے کے احکامات نہیں دیے۔

خیال رہے کہ امریکی صدر وائٹ ہائوس کے قریب ایک تاریخی چرچ کےد ورے پر آئے تو حکومت کے دیگر اعلیٰ حکام بھی ان کے ہمراہ تھے۔

فاکس نیوز ریڈیو سے بات کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے کہا کہ میری چرچ آمد کے موقعے پر کسی قسم کی اشک آور گیس کا استعمال نہیں کیا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ جب میں چرچ میں آیا تو لوگوں کو وہاں سے باہر نکالنے کا نہیں کیا۔