.

افغانستان میں کرونا کی وجہ سے مختلف علاقوں میں پولیو کے نئے کیسز کا انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افغانستان میں ایک طرف کرونا کی وبا تیزی کے ساتھ پھیل رہی ہے اور دوسری طرف پولیس سے محفوظ قرار دیے گئے متعدد علاقوں میں پولیو کے نئے کیسز سامنے آنے کے بعد تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے۔

اتوار کے روز افغان عہدیداروں نے بتایا کہ افغانستان نے ان علاقوں میں پولیو کے واقعات کا پتہ چلا ہے جنہوں نے ویکسینیشن پروگراموں کو عارضی طور پر معطل کرنے کے بعد اس بیماری سے پاک قرار دیا تھا۔

"افغانستان میں پولیو کے خاتمے کے پروگرام" کے ترجمان، یان راسخ نے بتایا کہ پولیو کے نئے کیسز تین صوبوں میں سامنے آئے ہیں۔ گذشتہ پانچ سال کے دوران ان صوبوں میں پولیو کا کوئی نیا کیس سامنے نہیں آیا تھا۔ پچھلے پانچ سال میں پہلی بار بلخ ، ہرات اور بدخشاں میں پولیو کا ایک ایک کیس سامنے آیا ہے۔

اگرچہ اس سال ملک بھر میں نئے پولیوکیسز کی تعداد 14 درج کی گئی جب کہ سال 2019 ء میں افغانستان میں پولیو کے 26 کیسز سامنے آئے تھے۔

راسخ مزید نے کہا کہ ہم نے برسوں تک سخت محنت کی اور محدود جغرافیائی علاقوں میں پولیو کو گھیرے میں لیا۔

انہوں نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ کرونا وائرس کی وجہ سے افغانستان کے جنوب اور جنوب مشرق میں ان علاقوں سے باہر پولیو پھیل گیا ہے اور اب یہ پورے ملک میں آبادی کو خطرہ بن رہا ہے۔

عالمی ادارہ اطفال یونیسف نے گذشتہ ماہ کہا تھا کہ درجنوں ممالک میں پولیو کے خاتمے کی مہم معطل کردی گئی ہے جبکہ 27 ممالک میں خسرہ سے بچاؤ کے قطرے پلانے کی مہم معطل کردی گئی ہے۔

رساخ کے مطابق جولائی میں مہمات دوبارہ شروع کرنے کی امید ظاہر کی جا رہی ہے۔عام طور پر پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کی دس مہمات پورے افغانستان میں ہر سال منعقد کی جاتی ہیں ، لیکن کوویڈ 19 کی وجہ سے سے صرف دو مشن کیے گئے تھے۔

افغانستان میں اب تک کرونا وائرس سے 471 اموات اور 24،500 سے زیادہ کیسز ریکارڈ ہوئے ہیں لیکن ماہرین کا کہنا ہے کہ افغانستان میں ٹیسٹوں کی تعداد میں کمی کے باعث بڑے پیمانے پر مریضوں کی نشاندہی نہیں کی جاسکی ہے۔