.

ایران پر اسلحہ کی پابندی غیرمعینہ مدت کے لیے عاید کی جانی چاہیے: برائن ہُک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے لیے امریکا کے خصوصی ایلچی برائن ہُک نے منگل کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ایران پر اسلحہ کے حصول پرعاید کردہ پابندیوں میں غیرمعینہ مدت کے لیے توسیع ہونی چاہیے۔ ان کا کہنا تھا کہ سنہ 2015ء کوایران اور عالمی طاقتوں کے درمیان طے پائی ڈیل کے تحت ایران پر اسلحہ کے حصول پر رواں سال اکتوبر تک پابندی عاید ہے مگر اب وقت آگیا ہے اس پابندی کو غیرمعینہ مدت کے لیے عاید کیا جائے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق تعلقات عامہ کونسل کے زیراہتمام منعقدہ ایک تقریب سےخطاب میں برائن ہک نے کہا کہ میرا نقطہ نظر یہ ہے کہ ایران پر اسلحہ کے حصول پر عاید کردہ پابندی کو کسی خاص تاریخ کے ساتھ نہ جوڑا جائے گا ایران پر حصول اسلحہ کی پابندی غیرمعینہ مدت کے لیے ہونی چاہیے۔

خیال رہے کہ سوموار کو امریکا نے سلامتی کونسل میں ایک نئی قرارداد کا مسودہ جمع کرایا ہے جس میں خطے میں ایران کی جانب سے دوسرے ممالک میں داخلت، ایرانی برتائو اور تہران کی طرف سے دہشت گردی کی پشت پناہی جاری رکھنے کی تفصیلات بیان کی گئی ہیں۔ اس قرارداد کا مقصد ایران کو اسلحہ کے حصول پرعاید پابندی میں توسیع کرنا ہے۔

امریکا کی طرف سے سلامتی کونسل میں پیش کی جانے والی قراردادوں میں کونسل کے تمام رکن ممالک سے کہا گیا ہے کہ وہ ایران کے ساتھ کسی قسم کی دفاعی ڈیل نہ کریں اور ایران کو اسلحہ کی فروخت پر پابندی برقرار رکھی جائے۔ ایران کےساتھ تجارت کو محدود کیا جائے۔ اگر کوئی کمپنی ایران کے ساتھ تجارت کی سہولت کار ہے تو اسے بھی پابندیوں کے شنکجے میں جکڑا جائے۔ ایران کے تمام منجمد اثاثے غیرمعینہ مدت کے لیے منجمد کیے جائیں۔

العربیہ ٹی وی چینل اور اس کے برادری ٹی وی الحدث کو امریکی قرارداد کا مسودہ موصول ہوا ہے۔

امریکا کی طرف سے یہ مسودہ قرار داد سلامتی کونسل کے چیپٹر سات میں جمع کرایا گیا ہے۔ امریکا نے اس مسودہ قانون کو اپنے اتحادیوں برطانیہ، فرانس اور جرمنی کے سامنے پیش کرنے سے قبل روس اور چین کے سامنے بھی پیش کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں