.

امریکی وزیرخارجہ کی ابوظبی کے ولی عہد سے یواے ای، اسرائیل معاہدے پر بات چیت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ابو ظبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید آل نہیان اور امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے ٹیلی فون پر بات چیت کی ہے اور انھوں نے متحدہ عرب امارات اور اسرائیل کے درمیان اعلان شدہ امن معاہدے کے بارے میں تبادلہ خیال کیا ہے۔

یو اے ای کی سرکاری خبررساں ایجنسی وام کے مطابق ’’انھوں نے معاہدے کو اس انداز میں مضبوط بنانے کے امکانات کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا ہے کہ جس سے خطے میں امن واستحکام کی اساس فراہم ہوسکے۔‘‘

مائیک پومپیو اسی ہفتے متحدہ عرب امارات کا دورہ کرنے والے ہیں۔اس سے پہلے انھوں نے اسرائیل اور سوڈان کا دورہ کیا ہے۔

ان کی اس بات چیت سے قبل متحدہ عرب امارات اور اسرائیل کے وزرائے دفاع نے منگل کے روز مشرقِ اوسط میں امن واستحکام اور دونوں ملکوں کے درمیان ’’ٹھوس دوطرفہ تعلقات‘‘ کے قیام کے بارے میں تبادلہ خیال کیا ہے۔

وام کے مطابق ’’وزیر مملکت برائے دفاعی امور محمد بن احمد الباوردی نے اسرائیلی وزیر دفاع بینی گینز سے ٹیلی فون پر دونوں ملکوں کے درمیان طے شدہ تاریخی معاہدے کے بارے میں بات چیت کی ہے۔‘‘

’’دونوں وزراء نے اس معاہدے کے بارے میں اپنے اس یقین کا اظہار کیا ہے کہ اس سے خطے میں امن واستحکام کے امکانات میں اضافہ ہوگا کیونکہ یہ اس سمت میں ایک مثبت قدم ہے۔‘‘

دونوں وزراء نے مواصلاتی چینلوں کو مضبوط بنانے کے علاوہ ایسے ٹھوس دوطرفہ تعلقات کے قیام کے حوالے سے بھی بات چیت کی ہے جن سے یو اے ای اور اسرائیل کے علاوہ پورے خطے کو فائدہ پہنچے۔

اس امن معاہدے کا 13 اگست کو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اعلان کیا تھا۔انھوں نے بتایا تھا کہ دونوں ملکوں کے لیڈر اب آیندہ ہفتوں کے دوران میں کسی وقت وائٹ ہاؤس میں اس امن معاہدے پر دست خط کریں گے۔

اس معاہدے کے تحت اسرائیل نے غربِ اردن میں واقع اپنے زیر قبضہ وادیِ اردن اور بعض دوسرے علاقوں کو ریاست میں ضم کرنے کے منصوبے سے دستبردار ہونے سے اتفاق کیا ہے۔ اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو نے ان علاقوں کو صہیونی ریاست میں ضم کرنے کا اعلان کررکھا تھا۔ فلسطینی اسرائیل کے زیر قبضہ غرب اردن اور غزہ کی پٹی پر مشتمل علاقوں میں اپنی آزاد ریاست قائم کرنا چاہتے ہیں جس کا دارالحکومت القدس ہو۔فلسطینی قیادت اس امن معاہدے کو مسترد کرچکی ہے۔

اسرائیل اور یو اے ای کے درمیان اس ڈیل کو’’معاہدۂ ابراہیم‘‘ (ابراہام اکارڈ) کا نام دیا گیا ہے۔اسرائیل کا کسی عرب ملک کے ساتھ 25 سال کے بعد یہ پہلا امن معاہدہ ہے۔اس کے بعد اسرائیل کی بعض دوسرے عرب ممالک کے ساتھ ایسے ہی امن معاہدوں اور سفارتی و تجارتی تعلقات کی بحالی کی راہ بھی ہموار ہوگئی ہے۔

قبل ازیں عرب ممالک میں سے مصر اور اردن کے اسرائیل کے ساتھ مکمل سفارتی تعلقات استوار ہیں۔ مصر نے اسرائیل کے ساتھ 1979ء میں کیمپ ڈیوڈ میں امن معاہدہ طے کیا تھا۔اس کے بعد 1994ء میں اردن نے اسرائیل کے ساتھ امن معاہدے کے بعد سفارتی تعلقات استوار کیے تھے۔